خدارا سیاستدان حکمران ملک اور قوم پر رحم کریں،خواتین حقوق چاہتی ہیں تو دامن فاطمہ زہراؑ سے وابستہ ہو جائیں، آغا حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

خدارا ملک اور قوم پر رحم کیا جائے، اپوزیشن حکومت کو کام کرنے دے، اہل اقتدارانتقامی کاروائیوں کا تاثر ختم کریں،آغا حامد موسوی
آئین کو تابع بنانے کی روش ترک کردی جائے،، افغانستان میں امن کو سب سے زیادہ خطرہ بھارت سے ہے،مسلم ممالک کشمیر پرخاموشی توڑیں
خارجہ پالیسی کی سمت درست رکھی جائے، آج بھی بعض قوتیں ہر مشکل میں آنکھیں پھیرنے والے امریکہ کو چین پر ترجیح دینا چاہتی ہیں
مودی پاکستان پر الزام لگا کر بھارتی اقلیتوں پر مظالم اور اپنی ناکامیوں کو چھپانا چاہتا ہے،سی پیک سے بھارتی بے چینی اور سازشوں میں اضافہ ہوگیا ہے
حضرت فاطمہ زہراؑ کی پیدائش کا دن یوم بنات، یوم مادراں اور یوم خواتین بھی ہے، دنیا بھر کی خواتین وجود فاطمہ زہراؑ کی ممنون احسان ہیں
خواتین عالم اگر واقعا حقوق حاصل کرنا چاہتی ہیں تو انہیں دامن فاطمہ زہراؑ سے وابستہ ہوکر اسلام کے سایہ میں پناہ لینا ہوگی، یوم عظمت نسواں کی تقریب سے خطاب

اسلام آباد( )سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے سیاستدانوں حکمرانوں سے اپیل کی ہے کہ خدارا ملک اور قوم پر رحم کریں، اپوزیشن حکومت کو کام کرنے دے، اہل اقتدار انتقامی کاروائیوں کا تاثرختم کرے، آئین اور قوانین کو مطیع و تابع بنانے کی روش ترک کردی جائے، آئین کے تحت رہ کر کام کیا جائے، افغانستان میں امن کو سب سے زیادہ خطرہ بھارت سے ہے اتحادی ممالک فوجیں رکھنے کے بجائے بھارت کو افغانستان سے نکالیں جو افغانستان میں ڈیرے ڈال کر مسلسل پاکستان پر حملہ آور ہے، خارجہ پالیسی کی سمت درست رکھی جائے آج بھی بعض قوتیں ہر مشکل میں آنکھیں پھیرنے والے امریکہ کو چین پر ترجیح دینا چاہتی ہیں،مسلمان ممالک کشمیر پرخاموشی توڑیں،دنیا بھر کی خواتین وجود فاطمہ زہراؑ کی ممنون احسان ہیں جن کی بدولت پستیوں میں گھری عورتوں کو عظمت و حرمت نصیب ہوئی،حضرت فاطمہ زہراؑ کی دنیا میں آمد کا نوارانی دن20 جمادی الثانی یوم بنات بھی ہے، یوم مادراں بھی ہے اور یوم خواتین بھی،جن کے دم قدم سے عورت کا حقیقی مقام اسلام نے زمانے پر آشکار کیا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے خاتون جنت حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیھا کے یوم ولادت کی مناسبت سے ’یوم عظمت نسواں‘ کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ مودی پاکستان پر الزام تراشیاں کرکے بھارتی اقلیتوں پر ہونیو الے مظالم، افغانستان پاکستان سمیت دیگر ہمسایہ ممالک میں مداخلت اور اپنی معاشی پالیسیوں کی ناکامی کو چھپانا چاہتا ہے جب سے سی پیک کا سلسلہ شروع ہوا بھارتی بے چینی اور سازشوں میں اضافہ ہوگیا ہے۔حضرت فاطمہ زہرا کے فضائل و مناقب بیان کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ طلوع اسلام سے قبل عورت اور بیٹی کا مقام اس قدر گر چکا تھاکہ وہ تذلیل کے پاتال میں اوندھے منہ پڑی تھی بدترین صنفی استحصال اس کا مقدر تھا، غلاموں کی طرح عورت کو بھی شہریت کا حق حاصل نہ تھا یونانی تہذیب انسانیت کو طاعون اور غم کا شکار کر نے کا الزام عورت کے سر دہرتی تھی حد تو یہ ہے کہ الہامی مذہب عیسائیت کے پیشوا عورت کو شیطانیت کا باب قرار دے کر موجبِ نفرت قراردے چکے تھے اور عرب معاشرے کا حال تو قرآن مجید کے الفاظ میں یہ تھا کہ جب ان میں سے کسی کو بیٹی کے پیدا ہونے کی خبر ملتی ہے تو اس کا چہرہ غم کے سبب کالا پڑ جاتا ہے، مختصر یہ کہ پیدا ہوتے ہی مار دیا جانا عورت کا مقدر تھا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ بطحا کی سرزمین سے پھوٹنے والی صدائے مصطفوی ؐ ظلم استحصال جہالت فسق و فجور کے گلے سڑے نظام کی بنیادیں پہلے ہی ہلا چکی تھی۔ذات خداوندی نے اپنے پیارے حبیب کے گھر میں فاطمہ جیسی بیٹی عطا کرکے عورتوں پر ظلم جبر استحصال کی فرسودہ روایات کو خس و خشاک کی مانند بکھیر کر رکھ دیا۔بیٹیوں سے نفرت کرنے والے معاشرے میں فاطمہ زہراؑ نبی کریم کی محبتوں کا مرکز بنی نظر آتی ہیں، جونبیؐ اللہ کی محبوب ترین ہستی ہیں ان کی محبوب ترین ہستی بھی فاطمہ زہرا ؑ ہیں۔ حضرت عائشہ سئے جب پوچھا گیا کہ حضورصلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو کس سے سب سے زیادہ محبت تھی۔ ام المومنین حضرت عائشہ نے فرمایا کہ فاطمہ زہراؑ سے۔ جس معاشرے میں لڑکے نسل کی بقا کی وجہ سے باعث افتخار سمجھے جاتے تھے وہاں افضل کائنات نبی کی نسل کا ذریعہ بیٹی قرار دے دی جاتی ہے۔ رسول اللہ ؐ نے فرمایا”ہر عورت کی اولاد کا نسب اس کے باپ کی طرف ہوتا ہے سوائے اولاد فاطمہ کے،میں ہی ان کا نسب ہوں اور میں ہی ان کا ولی ہوں“حضرت عمر ؓ سے یہ بھی روایت ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا کہ قیامت کے دن ہر نسب منقطع ہو جائے گا سوائے میرے نسب اولاد فاطمہؑ کے۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ حضرت فاطمہ زہراؑ کی عظمتوں رفعتوں کا احاطہ خدا اور نبی کے سوا کوئی کر ہی نہیں سکتا۔جب حشر کا میدان سجے گا توبڑے بڑے شیر دل اور بہادر لوگوں کے دل خوف سے کانپ رہے ہوں گے، زمین کپکپا رہی ہو گی آ سمان تھر تھرارہا ہوگااس روز نبی ؐ کی بیٹی حضرت فاطمہ زہرا ؑ کی عجب شان ہوگی ام المومنین حضرت عائشہ ؓ وحضرت ابو ایوب انصاری ؓ سے روایت ہے کہ روزقیامت عرش کی گہرائیوں سے ایک ندا دینے والا آواز دے گا۔ اے محشر والو! اپنے سروں کو جھکا لو اور اپنی نگاہیں نیچی کرلو تاکہ فاطمہ بنت محمد مصطفی ؐ گزر جائیں۔پس فاطمہ زہراؑ گزر جائیں گی اور آپ کے ساتھ چمکتی بجلیوں کی طرح ستر ہزار خادمائیں ہوں گی۔آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ خواتین عالم اگر واقعا حقوق حاصل کرنا چاہتی ہیں تو انہیں دامن فاطمہ زہراؑ سے وابستہ ہوکر اسلام کے سایہ میں پناہ لینا ہوگی اور مسلم خواتین کو بھی دنیا و آخرت میں سرخروئی کیلئے مغرب کی اندھی تقلید کرنے کے بجائے سیرت فاطمہ زہراؑ کو آئیڈیل بنانا ہوگا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.