’زندہ د لانِ لاہور‘ اولادِ رسولؐ کی شان میں گستاخی کیخلاف سراپا احتجاج، پورے صوبہ میں تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے مظاہرے ریلیاں

ولایت نیوز شیئر کریں

فرزند رسولؐ امام موسیٰ کاظم ؑ کی شان میں گستاخی کے خلاف تحریک نفاذفقہ جعفریہ کا پنجاب کے تمام شہروں میں احتجاج
آئمہ اہلبیتؑ، مخدراتؑعصمت و طہارت کی شان میں بدترین گستاخی اسلام کے خلاف اعلان جنگ ہے، گستاخوں کو عبرتناک سزا دی جائے۔ سید عمران نقوی
مشاہیرِ اسلام کی شان میں گستاخی، بم دھماکے اور پاک فوج پر حملے ایک ہی سازش کا شاخسانہ ہیں، کالعدم گروپوں پر عملی پابندی عائد کرنا ناگزیر ہو چکا ہے
شاتمانِ رسول ؐ و آلِ رسولؐ کے خلاف تمام مسالک ہم آواز ہیں، قائد ملت جعفریہ آغا حامد موسوی کی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے سازشوں کو ناکام بنائیں گے۔ (مقررین کا خطاب)

لاہور ( ولایت نیوز) فرزندان رسولؐ امام موسٰی کاظم ؑ، اما م محمد تقی، امام علی نقی، امام حسنؑ مجتبٰی، مخدراتِؑ عصمت و طہارت نفس ِ رسولؐ مولائے کائنات حضرت علی ؑ اور پاکیزہ صحابہ ؓ کی شان میں گستاخیوں کے واقعات کے خلاف قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی کی کال پر 2 جولائی کو یوم احتجاج کے طور پر منایا گیا۔

اس موقع پر ملک کے دیگر صوبوں کی طرح پنجاب بھر میں بھی پر امن احتجاجی مظاہرے منعقد کیئے گئے۔

اس سلسلے میں تحریک نفاذ فقہ جعفریہ ریجنل کونسل لاہور کے زیر اہتمام احتجاجی مظاہرہ مرکزی شیعہ جامع مسجد کے باہر حیدر روڈ اسلام پورہ میں منعقد ہوا جسکی صدارت سید عمران حیدر نقوی، رانا ذوالقرنین حیدر، سید شاہد کاظمی، عمار حسین منج اور دیگر عائدین نے کی۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سید عمران حیدر نقوی نے کہا کہ ہم ایک ایسے قبیح فعل و گستاخی و جسارت کے خلاف سراپا احتجاج ہیں جس میں ملک و قوم کے دشمنوں نے ایک مرتبہ پھرشان ِ اہل بیت و صحابہ کرام میں بدترین گستاخی کر کے پاکستان میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی اور بھائی چارے کی فضا کو ملیا میٹ کرنے کی مذموم کوشش کی ہے۔ خود کو ابتسام الہی ظہیر کا رشتہ دار بتانے والے عبد الرحمن سلفی عرف آذان نے فرزاندان رسول ؐ آئمہ اہل بیت علیہم حضرت امام موسیٰ کاظم ؑ،حضرت امام تقی ؑ، حضرت امام نقی ؑ،حضرت امام حسن عسکریؑ،مخدراتِؑ عصمت و طہارت کی شان میں سنگین توہین آمیز و گستاخانہ مغلظات بکیں ہیں، اسلام کے نام پر بننے والے ملک میں بانیان ِ اسلام اہلبیت رسول ؐکے خلاف ناپاک ترین جسارت کا ہونا لمحہ فکریہ ہے اور اس پر مستزادیہ کہ اب تک اس گستاخ و شاطم ِآئمہ اہلبیت ؑکونہ گرفتار کیا گیا اور نہ ہی اس کے خلاف کوئی ایکشن لیا گیا،حضرت امام موسیٰ کاظم ؑ وہ معصوم ہستی ہیں جنہیں امامِ اہل سنت امامِ شافعی ؒ نے دعاؤں کی قبولیت کا وسیلہ قرار دیا۔دنیا یاد رکھے کہ امام موسیٰ کاظم ؑ اپنے دور کے حیدر کرار بھی تھے خطیب منبر سلونی بھی اور وارث ِ رسول اللہ بھی تھے جن کی حیات طیبہ کا لمحہ لمحہ مشیت پروردگار کا پر تو تھی جن کے در اقدس سے علم و حکمت کے دریا جاری ہوتے ہیں،جن کا زہد و وریٰ عبادت و ریاضت تاریخ اسلام کا درخشان باب ہیں۔ امام موسیٰ کاظم ؑ نے قید خانوں کو عبادت خانوں میں بدل دیا، جن کے در اقدس کو آج بھی دنیا باب الحوائج یعنی حاجات کی قبولیت کے دروازے کے طور پر جانتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سوشل میڈیا پر وائرل ایک اور ویڈیومیں ایک اور بدبخت نفسِ رسولؐ مولائے کائنات حضرت علی ؑ اور نواسہ رسول، خوشبوئے مصطفیؐ حضرت امام حسن ؑ کی شان میں گستاخی کی ہے اور تمام مسلمانوں کے نزدیک خلیفہ بر حق تسلیم کیے جانیوالے امام حسن ؑ کو بغاوت کے ساتھ وابستہ کر نے کی کوشش کی ہے جبکہ اس شخص نے جنگوں میں پاک افواج کی جرات و دلیری کی پہچان اور مشکلات میں دلوں کو قوت بخشنے والے مولا علی ؑکے نام کے نعروں کے خلاف بھی ہرزہ سرائی کی ہے۔ عمران نقوی کا کہنا تھا کہ قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے اس مذموم گھناؤنی حرکت کو بدلتے عالمی حالات میں دشمنان اسلام وشیاطین عالم کی سازش کا شاخسانہ قرار دیا ہے جس کا مقصد پاکستان میں آگ لگانا ہے،لہذا محب وطن قوتوں کو جاگنا ہو گا اور ایسے دہشت گرد عناصر کو آہنی شکنجے میں جکڑنا ہوگا۔

عمران نقوی نے قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی کے اس موقف کو دہرایا کہ ایک مذموم گستاخی کے ذریعے دین اور مدارس کو بدنام کرنے والوں کو بچانے کیلئے پاکیزہ صحابہؓ پر کیچڑ اچھالا جارہا ہے جس کا فوری نوٹس لیا جائے۔ اس موقع پر شرکائے مظاہرہ کی جانب سے منظور کردہ قراردادوں میں حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ مشاہیر اسلام کی توہین کرنے والوں کو عبرتناک سزائیں دی جائیں اور گستاخوں کو نکیل ڈالی جائے جو اپنی مذموم حرکتوں سے پاک فوج کی شاندار کامیابیوں کوبرباد کرنا چاہتے ہیں،یہی وجہ ہے کہ ایک طرف گستاخیاں کی جا رہیں ہیں تو دورسری طرف پاک فوج پر حملے کئے جا رہیں جو پاکستان کو کمزور کرنے کی ایک ہی سازش کا شاخسانہ ہیں۔

شرکائے مظاہرہ نے اس عہد کا اظہار کیا کہ قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی کی بصیرت افروز قیادت میں ملک دشمن عناصر کی سازشوں کو ناکام بنا دیں گے جنہوں نے خود کش دھماکوں،ٹارگٹ کلنگ اور دہشت و تشدد سے بھرپور ماحول میں بھی وحدت و اخوت کا پرچم سربلند رکھا اور شیعہ سنی لڑائی کے خواہشمند سکرپٹ رائٹرز کے سامنے ہمیشہ سیسہ پلائی ہوئی دیوار بنے رہے جس کے نتیجے میں آج سبھی مکاتب باہم شیرو شکر ہیں۔

قرار داد میں حکومت سے مطالبہ کیا گیا کہ نیشنل ایکشن پلان کی ہرشق پر عمل کیا جائے اور نظریاتی کونسل متحدہ علماء بورڈ، ہم آہنگی کمیٹیوں سمیت تمام ریاستی اداروں کو کالعدم جماعتوں سے پاک کیا جائے جو امن کے دشمنوں کی پشت پناہی کا کردار ادا کرہے ہیں۔ ایک اور قرارداد میں نو تشکیل’یکساں نصاب‘ تعلیم کوقرآن و سنت سے انحراف اور نظریہ اساسی سے متصادم قرارد یتے ہوئے مسترد کر دیا گیا۔

متنازعہ نصاب کے علاوہ مسلم فیملی لاز 1961 آرڈینینس کے ترمیمی بل کو فقہ جعفریہ میں مداخلت قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا گیا کہ وزیر اعظم عمران خان طے شدہ مسائل سے مسلسل چھیڑ خانی کا نوٹس لیں۔

پنجاب کے دیگر شہروں بشمول راولپنڈی، فیصل آباد، گوجرانوالہ، سیالکوٹ، گجرات، ملتان، ڈیرہ غازی خان، وہاڑی، ساہیوال،سرگودھا، مظفر گڑھ، چکوال، ٹیکسلا، بہاولپور، اٹک سمیت دیگر شہروں میں بھی احتجاجی پروگرام منعقد ہوئے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.