5جولائی کا گھاؤ آج بھی مندمل نہیں ہوا،توہین کے قانون پر انتظامیہ کے دوہرے معیار کا نوٹس لیا جائے،آغا حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

5جولائی کا گھاؤ آج بھی مندمل نہیں ہوا،ملکی استحکام کیلئے ا ٓمریت کے پروردہ تعصبات کا خاتمہ ضروری ہے،آغا حامد موسوی
عالمی برادری بے گناہ لاشوں پر سسکتے کشمیری بچوں کی فریاد سنے، عالمی ضمیر منافقت کی خمارآورگولیاں لئے خواب خرگوش میں پڑاہے
بھارتی توسیع پسندی اایٹمی جنگ کی چنگاریاں بھڑکا رہی ہے،پاکستان چین اور نیپال اشتعال انگیزیوں کے خلاف مشترکہ لائحہ عمل اپنائیں
غیر مذاہب کی عبادتگاہوں کیلئے بے چین مسلم حکمران اسلامی آثار کی بحالی پربھی توجہ دیں،جنت البقیع امت مسلمہ کی ناقدری پر نوحہ کناں ہے
گالم گلوچ کا کلچر بیرونی سرمائے پر پلنے والی تنظیموں نے پھیلایاچیف جسٹس توہین کے قانون پر انتظامیہ کے دوہرے معیار کا نوٹس لیں
اسلام کی حقانیت پر ہونے والے حملوں کو ناکام بنانے کیلئے امام علی ابن موسی الرضا کی سیرت کو اپنانا ہوگا، ایام ضامن کی اختتامی تقریب سے خطاب

اسلام آباد( ولایت نیوز)سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ 5جولائی 77ء کو کو وطن عزیز کو لگنے والے مہلک زخم کا گھاؤ آج بھی مندمل نہیں ہوا، وطن عزیز کے استحکام کیلئے ا ٓمریت کے پروردہ تعصبات کو خاتمہ ضروری ہے، عالمی برادری بے گناہ لاشوں پر سسکتے کشمیری بچوں کی فریاد سنے ، بھارتی ظلم انتہاؤں کو چھور ہا ہے لیکن کشمیر کے معاملے میں عالمی ضمیر منافقت کی خمارآورگولیاں لئے خواب خرگوش میں پڑاہے،بھارت کی توسیع پسندی اایٹمی جنگ کی چنگاریاں بھڑکا رہی ہے،پاکستان چین اور نیپال بھارتی ناپاک عزائم اشتعال انگیزیوں کے خلاف مشترکہ لائحہ عمل اختیار کریں، غیر مذاہب کی عبادتگاہوں کیلئے بے چین مسلم حکمران اسلام کے محسنوں کے مزارات و آثار کی بحالی کی جانب بھی توجہ دیں، جنت البقیع و جنت المعلی میں امہات المومنین صحابہ و اہلبیت اور خاتون جنت کے مزارات کی خستہ حالی امت مسلمہ کی ناقدری پر نوحہ کناں ہے،گالم گلوچ کا کلچر بیرونی سرمائے پر پلنے والی تنظیموں نے پھیلایاچیف جسٹس توہین کے قانون پر انتظامیہ کے دوہرے معیار کا نوٹس لیں،اسلام کی حقانیت پر ہونے والے حملوں کو ناکام بنانے کیلئے امام ضامن علی ابن موسی الرضا علیہ السلام کی سیرت کو اپنانا ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے امام علی ابن موسی الرضا علیہ السلام کے یوم ولادت پرنور کی مناسبت سے ایام ضامن کی اختتامی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر والعصر میڈیا سیل کی جانب سے قائد ملت جعفریہ کی خدمت میں ’نشان شمس الشموسؑ’ یادگاری شیلڈ بھی پیش کی گئی۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ امام علی رضا علیہ السلام کے دور امامت میں یونان و سکندریہ کی تصنیفات و تالیفات کے عربی تراجم کے نتیجے میں افکار و عقائد و نظریات کا ٹکراؤسامنے آیا، نئے افکار کی روشنی میں اسلام پر اعتراضات کی مہم شروع کردی گئی اس دور میں اسلام دشمنوں کو جواب دینے کیلئے مسلمانوں کا واحد سہاراامام رضا علیہ السلام کا وجود تھا۔امام علیہ السلام اس دور میں مذاہب و ادیان کے مختلف علماء کو دین اسلام کے حقائق سے روشناس فرماتے اور مناظروں و مباحثوں میں انہیں لاجواب کردیتے ہیں یہ صلاحیت خانوادہ رسالت ؐ کی عظیم ہستی کا ہی اعجاز تھی۔

انہوں نے کہا کہ نصرانی عالم ”جاثلیق“ نامور یہودی عالم ”راس الجالوت“ جیسوں کو اپنے علم پر بڑا تکبر اور ناز تھا اور وہ مسلمان علماء کو لاجواب کردیا کرتے لیکن جب خلیفہ کی درخواست پر ان کا مناظرہ امام رضاؑ سے ہوا تو آپ نے توریت اور انجیل سے ان غیر مسلم عالموں کو زیر کردیا امام علی رضا ؑ جب توریت و زبور انجیل سے ختمی مرتبت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی عظمت رفعت کو آشکار کرتے تو اسلام کا بول بالا ہو جاتا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ علوم و فنون کی بے پایاں ترقی کے دور میں کوئی امام جعفر صادق علیہ السلام کے پوتے امام علی رضا کا ہمسر نہ تھاتاریخ کی کتب ایسے واقعات سے بھری پڑی ہیں جب بہت سے مجوسی،دہریے اور دیگر علماء کو امام علی رضا علیہ السلام نے دلائل سے اسلام کی حقانیت تسلیم کرنے پر مجبور کردیا اسی لئے انہیں ’عالم آل محمد ؐ‘ کا خطاب عطا ہوا۔

انہوں نے کہا کہ امام رضا ؑ کے طبی اور غذائی حوالے سے فرامین اسلامی طب کا ماخذ ہیں جن سے دنیائے طب آج بھی شرفیاب ہو رہی ہے خلیفہ مامون الرشید عباسی نے امام علی رضاؑ کے طبی رسالہ کو آب زر سے لکھے کا حکم صادرکیا تھا،امام علی ابن موسی رضا ؑ ذکر شہادت حسین ؑ کیلئے عزاداری کی خصوصی مجالس کاانعقاد کرتے اور تمام پیروکاروں کو بھی اس ذکر کی تاکید کرتے یہی ذکر حسین ؑعزاداری کی صورت دنیا بھر کے مظلوموں کی پناہ گاہ اور ظالمین کیلئے خوف کی علامت ہے۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ امام علی رضا علیہ السلام کا فرمان ہے کہ جو شخص اپنے نفس کا محاسبہ کرے گا نفع میں رہے گا جو غفلت برتے گا وہ گھاٹے میں رہے گا جو شخص اللہ سے ڈرے گا وہ دوسروں سے بے خوف رہے گا جو شخص نصیحت حاصل کرے گا وہ بینا وبابصیرت ہوجائیگا، حکمران و سیاستدان اگر خود احتسابی کی راہ اپنا لیں تو نہ صرف 5جولائی جیسے سیاہ اقدامات کا تدارک ہو سکتا ہے بلکہ وطن عزیز بھی بام عروج پر پہنچ سکتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.