ذکر حسین ؑ کے بغیر نصاب کی تشکیل قوم سے جذبہ شہادت چھیننے کی سازش ہے کربلا وطن کے دفاع اور اسلام کی بقا کا درس جاوداں ہے،آغا حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

کوئٹہ میں فورسز کے جوانوں کی شہادت ازلی دشمن کیلئے پیغام: قوم کا بچہ بچہ دفاع پاکستان کیلئے مرنے کو تیار ہے، قائد ملت جعفریہ آغا حامد موسوی
کربلا وطن کے دفاع اور اسلام کی بقا کا درس جاوداں ہے،ذکر حسین ؑ کے بغیر نصاب کی تشکیل قوم سے جذبہ شہادت چھیننے کی سازش ہے
ذکر حسین ؑ سے لبریز ماؤں کی لوریوں لوک داستانوں اولیاء کے کلاموں کے ذریعے امت میں شوق شہادت پروان چڑھا، ذکرحسین ؑ کسی مسلک کی میراث نہیں
بھارت اپنی ناکامیوں کابدلہ بلوچستان میں چکاناچاہتاہے،ملک بھرمیں متواتردہشت گرد کاروائیاں کالعدم جماعتوں کوملنے والی ڈھیل کانتیجہ ہے
قوم کے بیٹے کب تک مصلحتوں کی بھیٹ چڑھتے رہیں گے؟، کالعدم تنظیمیں کانفرنسیں کررہی ہیں، بے گناہوں کوفورتھ شیڈول میں ڈال کرخانہ پری کی جارہی ہے
برستے بارود اور خودکش دھماکوں میں بھی نہ وطن سے وفاداری چھوڑی نہ حسینیت کے علم پر آنچ آنے دی، ہر ادارے میں موجودکالعدم جماعتوں کے ہمدرد وں کی بیخ کنی کی جائے
شہزادی سکینہ بنت الحسین ؑ کی مظلومانہ شہادت ابد تک کمزوروں کو ظالموں سے ٹکرانے کا حوصلہ بخشتی رہے گی،عشرہ شہیدہ زنداں کے آغا ز اور یوم دفاع کے موقع پر مجلس سے خطاب

اسلام آباد (ولایت نیوز ) سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ کوئٹہ میں فورسز کے جوانوں کی دہشت گرد حملے میں شہادت ازلی دشمن کیلئے پیغام ہے کہ قوم کا بچہ بچہ دفاع پاکستان کیلئے مرنے کو تیار ہے۔

انہوں نے کہا کہ کربلا وطن کے دفاع اور اسلام کی بقا کا درس جاوداں ہے ذکر حسین ؑ کے بغیر یکساں نصاب کی تشکیل قوم سے جذبہ شہادت چھیننے کی سازش ہے، ازلی دشمن بھارت اپنی ناکامیوں کابدلہ بلوچستان میں چکاناچاہتاہے،ملک بھرمیں متواتردہشت گرد کاروائیاں کالعدم جماعتوں کوملنے والی ڈھیل کانتیجہ ہے، قوم کے بیٹے کب تک مصلحتوں کی بھیٹ چڑھتے رہیں گے؟، کالعدم تنظیموں کے رہنماکانفرنسیں کررہے ہیں، بے گناہوں کوفورشیڈول میں ڈال کرخانہ پری کی جارہی ہے، ذکر شہادت حسین ؑ کسی مکتب مسلک کی میراث نہیں ذکر حسین ؑ سے لبریز ماؤں کی لوریوں لوک داستانوں فقراو اولیاء کے کلاموں کے ذریعے امت مسلمہ کی نسلوں میں شوق شہادت پروان چڑھایا جاتا رہا اسلام کے دشمن اسی شوق شہادت سے خوفزدہ ہیں۔

شہزادی سکینہ بنت الحسین ؑ کی مظلومانہ شہادت ابد تک کمزوروں کو ظالموں سے ٹکرانے کا حوصلہ بخشتی رہے گی۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے عشرہ شہیدہ زنداں کے آغا ز اور یوم دفاع پاکستان کے موقع پر مجلس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ اسلام کی حیات منی سے کربلا تک دی جانے والی قربانیوں کی مرہون منت ہے اسی لئے حکیم الامت نے داستان حرم کا آغاز حضرت اسمعیلؑ اور تکمیل نواسہ امام حسین ؑ کی لازوال قربانی کو قرار دیایہی وہ قربانیاں ہیں جن کا تذکرہ ہر آنے ولی نسلوں میں حریت کی حرارت بھر دیتا ہے لیکن گذشتہ چار عشروں سے حسینیت کی بنیادوں پر کھڑے ہونے والے ملک پاکستان میں یہ روش چل نکلی ہے کہ کربلا کے درس حریت کو عام ہونے سے روکا جائے جو پاکستان کے خاف ایک گھناؤنی سازش ہے۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ لیکن چند ناصبی خارجی قوتوں نے امت کی وحدت و اخوت کی علامت اس مشترکہ میراث کو متنازعہ بنانے کی کوشش شروع کررکھی ہے جسے شیعہ سنی برادران نے پہلے بھی ناکام کیا آئندہ بھی ناکام کریں گے۔انہوں نے کہا کہ یہ بات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں کہ کالعدم جماعتیں دشمن کے سہولت کارہیں جو دشمن کے ڈالرو پاؤنڈ اور درہم و دینار و ریال کی خاطرمادر وطن کو کے امن عزت و غیرت کا سودا کرتے رہے ہیں بیرونی آلہ کاروں سے حکومتوں او ر سیاستدانوں کی چشم پوشی کے سبب آج یہ پریشر گروپ اتنے طاقتور ہوچکے ہیں کہ ہر ادارے میں ان کے ہمدرد وں نے بسیرا کرلیا ہے دیرپا امن کیلئے ضروری ہے کہ کالعدم جماعتوں اور ان کے ہر پشت پناہ و سہلوت کارو ہمدرد کی بیخ کنی کی جائے۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ ہم نے برستے بارود اور خودکش دھماکوں میں بھی نہ وطن سے وفاداری چھوڑی نہ حسینیت کے علم پر آنچ آنے دی آئندہ بھی کسی سازش شرارت کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے دین و وطن کی حرمت اور پاکیزہ عقائدکے تحفظ کیلئے ہرقربانی کیلئے تیار رہیں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.