ظلم سعودی عرب میں ہو یا ایران میں قابل مذمت ہے،امت مسلمہ پر عجب وقت آن پڑا ہے مند ربنوائے مزار گرائے جارہے ہیں، آغا حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

ظلم کشمیر و فلسطین میں ہو یا سعودی عرب و ایران میں قابل مذمت اور اسلامی تعلیمات کی پامالی ہے، آغا حامد موسوی

بے گناہوں کے سر قطیف میں قلم ہوں یا اہواز میں!اسلامی نظام عدل پر دھبہ ہیں،ہرمصطفوی ؐو مرتضوی ؑ ہرجبرکیخلاف سراپا احتجاج ہے

امت مسلمہ پر عجب وقت آن پڑا ہے مند ربنوائے جارہے ہیں اور صحابہ و اہل بیت ؑکے مزار ات شرک کے الزام پر گرائے جارہے ہیں

اسلام سزاؤں کا مذہب نہیں مسلم حکمران دشمن کی تقویت کا سامان نہ کریں،ایران خط خمینی ؒچھوڑچکاسعودیہ اپنے بچاؤکیلئے حرمین کانام استعمال کررہاہے

اپنے عوام پرقیامتیں گرانے والے مسلم سربراہان القدس و کشمیر کیلئے توانا آواز بلند نہیں کرسکتے، پاک فوج اور پولیس کے شہداء کو سلام، یوم ترحیم پرخطاب

اسلام آباد (ولایت نیوز ) سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی و تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے سربراہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہاہے کہ ظلم کشمیر و فلسطین میں ہو یا سعودی عرب و ایران میں قابل مذمت اور اسلامی تعلیمات کی پامالی ہے، بے گناہوں کے سر قطیف میں قلم ہوں یا اہواز میں،اسلامی نظام عدل پر دھبہ ہیں،ہرمصطفوی ؐو مرتضوی ؑ ہرقسم کی دہشتگردی کیخلاف سراپا احتجاج ہے، اسلام مظلوموں کا طرفدار ہے دہشتگردوں،انکے سرپرستوں اورپٹھوؤں سے اظہاربیزاری کرتا ہے،امت مسلمہ پر عجب وقت آن پڑا ہے ایک طرف سرزمین عرب میں بت پرستی کیلئے مند ربنوائے رہے ہیں اور دوسری جانب امہات المومنین صحابہ کبارؓاور اہل بیت اطہار ؑکے مزارات شرک کے الزام پر گرائے جارہے ہیں، اسلام سزاؤں کا مذہب بنا کر پیش کرنا دشمن کا یجنڈا ہے مسلم حکمران شیطانی قوتوں کی تقویت کا سامان نہ کریں، ایران خط خمینیؒ چھوڑ چکا ہے اور سعودیہ بھی اپنے تحفظ کیلئے حرمین کانام استعمال کررہاہے،حرمین کاتحفظ کسی ملک یا خاندان نہیں ہر کلمہ گو پر واجب ہے، اپنے ممالک میں عوام پرقیامتیں گرانے والے مسلم سرابرہان القدس و کشمیر کیلئے توانا آواز بلند نہیں کرسکتے پوری قوم شہدائے عساکرپاکستان، پولیس کے جوانوں کوسلام عقیدت پیش کرتی ہے اورسوگوارخاندانوں کے غم میں برابرکی شریک ہے،ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملک گیر یوم ترحیم کے موقع پر علامہ کاظم رضاکاظمی اور مخدوم نزاکت نقوی کی زیر سرکردگی علماء و عزاداران کے وفد سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ شیطانی لا بیاں خلافت عثمانیہ کو گرا کراپنی مرضی کا نیاجغرافیہ وجودمیں لا ئیں اورمسلم عوام پرپٹھوحکمران مسلط کرکے انہیں تشددکانشانہ بنایاجسکی بناء پر اسلام پرتشدداورسزاؤں کا الزام دھر دیاگیا،استعماری قوتوں کا مسلط کردہ مخصوص ٹولہ ابلیسی قوتوں کی شہ پربیگناہ مسلمانوں کاقتل عام کررہاہے، بزرگوں، جوانوں، بچوں اورخواتین تک کے سرقلم کیے جارہے ہیں، مشاہیراسلام کے مدافن حتیٰ کے پیغمبران خداکی قبریں تک مسمارکی جارہی ہیں تاکہ مسلم ممالک میں افتراق وانتشاربڑھتارہے اورنفرتوں اورعصبیتوں میں مزید اضافہ ہو۔

انہوں نے کہاکہ مسجداقصیٰ کی آتشزدگی کے سانحہ کے بعد قائم ہونے والی وآئی سی نے مقامات مقدسہ اور مسلمانوں کے تحفظ کے بجائے مسلم ممالک میں مزید تفریق ڈال دی ہے۔

آغا سید حامد علی شاموسوی نے کہاکہ عالمی سرغنے اوراسکے بغل بچوں نے نائن الیون سے لیکرممبئی حملوں اورپلوامہ ڈرامہ تک جو تباہی مچارکھی ہے اس کامقصدمسلمانوں پردہشت گردی کاالزام لگاکرانہیں فرقوں میں تقسیم کرناہے تاکہ وہ لڑتے مرتے رہیں اوراستعماری سرغنہ اپنے مفادات حاصل کرتارہے۔ شیطانی قوتیں پاکستان کواپنے لے خطرہ گردانتی ہیں اسی لئے نائن الیون کاڈرامہ رچاکرپاکستان کوفرنٹ لائن پرلایاگیا،قوم نے پون لاکھ سے زائدجانوں کے نذرانے پیش کیے لیکن ڈومورکے مطالبات پھربھی جاری ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کوئی مسلم ملک دوسرے اسلامی ملک سے اتحادکیلئے ہاتھ بڑھائے توپابندیوں کی دھمکیاں دی جاتی ہیں چنانچہ وزیراعظم عمران خان کے دورہٗ ایران پرانتباہ کیاگیا کہ اگرکوئی پاک ایران معاہدہ کیاگیا توپاکستان کوپابندیوں کاسامناکرناپڑے گاجوسوالیہ نشان ہے؟

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ امت مسلمہ کے پاس اسلام کے تحفظ،مقاصدعظمیٰ کی پاسداری کاعظیم ترین ہتھیارشہادت ہے جومومن کامطلوب ومقصودہے، یہ اعزازوہ حاصل کرتاہے کہ جوبلندترین اقدارکے حصول کی جدوجہدمیں مارجائے، شہادت درحقیقت انسانی اقدارکی حفاظت کانام ہے،ہمیں قتل کرکے ہمارے لاشوں کے ٹکڑے کیے جاسکتے ہیں، ٹکڑوں کوجلاکرہوامیں اڑایاجاسکتاہے مگرامت مسلمہ کے عظیم مقاصدسے نہیں ہٹایاجاسکتا، ہم پاکستان کاتحفظ کرناجانتے ہیں، یہ 71ء والانہیں نیاپاکستان ہے جوایٹمی قوت ہے کسی ابلیسی کواسلام کے قلعہ پاکستان میں دراڑیں نہیں ڈالنے دیں گے،مثالی اتحادسے دشمن کی ہرسازش وشرارت کوناکام کردیں گے۔

انہوں نے کہاکہ کشمیروفلسطین، قطیف، دمام، یمن لیبیا، شام، ایران، عراق میں بے گناہوں کومارنانہایت قابل مذمت ہے ہم ہرقسم کی دہشتگردی کیخلاف صدائے احتجاج،دہشتگردوں،انکے سرپرستوں اورپٹھوؤں سے اظہاربیزاری کرتے ہیں۔

آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی نے واضح کیا کہ عالم اسلام کے اجتماعی مفادکی خاطرمسلم حکمرانوں کومتحدہ پلیٹ فارم سے جراٗت مندانہ حکمت عملی وضع کرنی ہوگی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.