سیدہ زہراؑ کی تربت خستہ حال و بے نشاں 

ولایت نیوز شیئر کریں

یوم انہدام جنت البقع

کلام:پروفیسر فدا محمد نئیر مرحوم
(چئیرمین شعبہ لائبریری اینڈ انفارمیشن سائنس، پشاور یونیورسٹی)

ہاں زمیں پھر خون رو ،ہاں آگ برسا آسماں
سیدہ زہرآ کی تربت خستہ حال و بے نشاں

کس کی تربت ہے کہ جس پر نہ چراغ ونہ گلے
نہ پرپر وان سوزد،نہ صدائے بلبلے

کیوں مزار سیدہؑ مسمار ہے اے آسماں
کیا مسلماں کا یہی کردار ہے اے آسماں

سیدہؑ لخت دل پییغمبرہر دوسراؐ
وہ بتول پاک،زہرہؑ اور طاہرہ ؑ

ناز مریم ؑ ،نور حشم رحمتہ اللعالمینؐ
وہ کہ جسکے گھر کا درباں ،حضرت روح الامین

بانو مولا علیؑ ،مشکل کشا ء،شیر خدا ؑ
مادر شبیر و شبر ؑ ،پیکر صبر و رضا

لب پہ قرآں کی تلاوت ،پیسنا وہ چکیاں
جس کا کردار وعمل ،اسلام کی تابانیاں

بے کس و ناچار کی حاجت روا وہ سیدہ ؑ
درد مندوں کے لیے اک آسرا وہ سیدہ ؑ

السلام اے سیدہ ؑ ،اے کشتہ ظلم وستم
السلام اے طاہرہ ،اے پیکر درد والم

السلام ا ے فاطمہؑ ،جان پیمبر السلام
سیدہ ؑ اے مادر شبیرؑ و شبرؑ السلام

اس کے ہر ذرے کی عظمت اور حرمت پے سلام
نےئر حیدر سلام اس خستہ تربت پر سلام

تھے وہی زہرہ ؑ تیری تربت کو مٹانے کے لیے
ہاتھ جو اٹھے تھے تیرا گھر جلانے کے لیے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.