یوم شہادت امام موسی کاظم ؑ پر پاکستان بھر میں مجالس و جلوس تابوت؛ فقید المثال اجتماعات مظلومیت کی فتح اور ظالموں کی شکست کا اعلان ہے ،آغا حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

یوم شہادت امام موسی کاظم ‘یوم باب الحوائج ‘کے ا طور پر منایا گیا،دنیا بھر کی طرح پاکستان کے تمام شہروں قصبوں میں مجالس و جلوسہائے تابوت کا انعقاد

دین و شریعت کے تحفظ کیلئے امام موسی کاظم نے تمام زندگی قید خانوں میں گزار دی ،قائد ملت جعفریہ آغا حامد موسوی کا مرکزی مجلس سے خطاب

امام کاظم ؑ عزم و استقامت کا کوہ گراں تھے زہر کا جام پی لیا ظلم سے سمجھوتہ گوارا نہ کیا

یوم باب الحوائج پر بغداد میں کئی ملین افراد کا اجتماع اور دنیا کے گوشے گوشے میں ذکر امام مظلومیت کی فتح اور ظالموں کی شکست کا اعلان ہے، آغا حامد موسوی

بھارت کامکروہ سفاک چہرہ دنیا پر بے نقاب ہو چکا ، پلوامہ جیسے سازشی منصوبوں کا مقصد عالمی دباؤ پاکستان پر منتقل کرنا ہے ،آغا حامد موسوی

یوم باب الحوائج پر صوبہ پنجاب کا مرکزی پروگرام ٹی این ایف جے کے زیر اہتمام دریائے چناب کے پل پر سیالکوٹ میں منعقد ہوا، ہزاروں افراد کی شرکت

راولپنڈی اسلام آباد میں برآمدگی تابوت کے مرکزی پروگرام دربار شاہ پیارا، سید کسراں، جسول میں برآمد ہوئے، خواتین کا مرکزی اجتماع جامعہ المرتضی جی نائن میں منعقد ہوا

ماتمی جلوسوں میں ہزاروں ماتمداروں کی سینہ زنی ،قمہ و زنجیر زنی ، گریہ و ماتم کرکے بارگاہ رسالت ؐ میں امام ہفتم کا پرسہ پیش کیا گیا

اسلام آباد (ولایت نیوز ) یوم شہادت اسیر بغداد باب الحوائج  امام موسی کاظم علیہ السلام  روایتی مذہبی جذبے اور عقیدت و احترام کیساتھ منایا گیا۔ قائد ملت جعفریہ ۤغا سید حامد علی شاہ موسو ی نے اس مناسبت سے 23تا 25 رجب عالمی ایام باب الحوایج منانے کا اعلان لررکھا تھا اس موقع پر ملک کے کونے کونے میں جلوس تابوت برآمد ہوئے اور مجالس عز ا کا انعقاد کیا گیا۔

مجلس شہادت امام موسی کاظم سے خطاب کرتے ہوئے سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی و تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے سربراہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ  امام موسی ٰکاظمؑ کی ذات حریت و آزادی اور عزیمت کا سرچشمہ ہے امام موسی کاظم عزم و استقامت کا کوہ گراں تھے جو دین و شریعت کے تحفظ کیلئے ظلم و بربریت و استبداد سے ٹکرائے ہر ظلم برداشت کیا لیکن کوئی جبر تشدد انہیں راہ حق سے ہٹا سکا نہ جھکا سکا، آپ نے شہادت کو گلے لگا لیا ظلم سے سمجھوتہ گوارا نہ کیا، مزار امام موسی کاظم دعاؤں کی قبولیت کی جا ہے اسی لئے ان کے مرقد کو باب الحوائج عند اللہ کہاگیا،امام موسی کاظم ؑکے یوم شہادت پر بغداد میں کئی ملین افراد کا اجتماع مظلومیت کی فتح اور ظالموں کی شکست کا اعلان ہے ۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کامکروہ اور سفاک چہرہ دنیا پر بے نقاب ہو چکا ہے،عالمی دنیا نے بھارت پر مسئلہ کشمیر حل کرنے کیلئے دباؤ بڑھانا شروع کردیا ہے پلوامہ جیسے سازشی منصوبوں کا مقصد عالمی دباؤ پاکستان پر منتقل کرنا ہے ، اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن اور ایمنسٹی انٹرنیشنل جیسے اداروں کی جانب سے کشمیر میں مظالم کی رپورٹیں اہنسا اور سیکولرزم کے دعووں کا منہ چڑا رہی ہیں ، عالمی اداروں کی رپورٹوں کو مسترد کرکے بھارت نے انسانی آزادیوں کے منہ پر طمانچہ رسید کیا ہے اپنی جمہوریت کا پول کھول دیا ہے، بھارت مقبوضہ کشمیر میں مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کیلئے اسرائیلی طرز پر اقدامات کررہا ہے آئین کی دفعہ 35Aبھارتی عزائم میں حائل ہے ۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ ہری سنگھ کے دور میں جموں کشمیر کی شہریت کے پاس کردہ قانون جسے آئین کی دفعہ 370کے آرٹیکل 35A کی صورت بھارتی دستورمیں شامل کیا گیاجسکی 1954میں توثیق کی گئی اور ریاستی اسمبلی نے بھی اس کی منظوری دی ۔بھارت اسے سپریم کورٹ میں دائر درخواستوں کے ذریعے ختم کرنے کیلئے کوشاں ہے ۔انہوں نے کہا کہ جواہر لعل نہرو نے اقوام متحدہ اور ملک کے مختلف مقامات پر کشمیر میں رائے شماری کرانے کا وعدہ کیا تھا لیکن پون صدی گزر چکی ہے بھارت خود ہی اقوام متحدہ کی قراردادوں کی منطوری میں حائل ہے اور کشمیر کو وپنا اٹوٹ انگ ثابت کرنے کیلئے من گھڑت جھوٹے دلائل دے رہا ہے اور بین الاقوامی سطح پر کشمیر کی وکالت کرنے والے پاکستان کے خلاف ہرزہ سرائی پر اترا ہوا ہے ۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ اموی حکومت آخری لمحات گزار رہی تھی کہ برج امامت کے ساتویں ستارے اور عصمت و طہارت کے نویں انمول موتی امام موسی کاظم علیہ السلام نے امام جعفر صادق کے خانوادہ امامت و ولایت میں آنکھیں کھولیں آپ کے ورود نے دنیائے علم و معرفت کو بشارت سے نوازا اور انسانیت کے دلوں میں امیدو سعادت کا نور روشن کیا ۔انہوں نے کہا کہ امام موسی کاظم کے فرامین حق پرستوں کیلئے مینارہ نور ہیں ، امام کاظم نے فرمایا کہ کسی کا احسان قبول کرنا انسان کی گردن پر ایسی زنجیر ہے جس کا بدلہ یا تو احسان ہے اور یا احسان کرنے والے کا شکریہ ہے اورظالم حکومت میں کام کرنے کا کفارہ دینی بھائی سے نیکی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ حکمرانوں کے قید خانے امام کاظم ؑ کے پائے استقلال میں لغزش پیدا نہ کرسکے امام قیدخانوں سے گھبرانے کے بجائے اللہ کا شکر ادا کرتے کہ عبادت کیلئے تنہائی میسر آگئی ہے حضرت امام موسی کاظم اس قدر زیادہ عبادت کرتے تھے کہ زندانوں کے نگہبان بھی اس کے تحت تاثیر آجاتے ۔

درایں اثنا ہیڈ کوارٹر مکتب تشیع میں آمدہ اطلاعات کے مطابق دنیا بھر کی طرح پاکستان کے تمام شہروں میں شہادت امام موسی کاظم ؑ کی مجالس منعقد ہوئیں اور جلوسہائے تابوت برآمد ہوئے ، جڑواں شہروں راولپنڈی اسلام آباد میں تابوت اسیربغداد مرکزی امام بارگاہ جامعہ المرتضی ٰ جی نائن فور اورراولپنڈی کا مرکزی جلوس باوا سید قاسم علی شاہ کے زیر اہتمام برمکان غلام حیدر شاہ دربار سخی شاہ پیارا ؑ سے برآمد ہوا، پنجاب کا مرکزی جلوس تابوت ٹی این ایف جے کے زیر اہتمام راول ککر سیالکوٹ سے برآمد ہوا جس میں ہزاروں افراد نے شرکت کی پشاور میں کیانی برادران کے زیر اہتمام مرکزی جلوس برآمد ہوا ،اس کے علاوہ لاہور کراچی ملتان سکھر کوئٹہ ہری پور ایبٹ آباد حیدر آبادکوہاٹ سمیت تمام شہروں قصبوں دیہات میں جلوس برآمد ہوئے جن میں شرکت کرکے فرزندان تو حید نے فرزند رسول امام موسی کاظم ؑ کی شہادت کا پرسہ بارگاہ رسالت و ولایت میں پیش کیا.

راولپنڈ ی میں مرکزی جلوسِ تابوت چوہڑ ہڑپال میں متولی دربار سخی شاہ پیارا باوا سید قاسم علی شاہ کے زیر اہتمام سید غلام حیدر شاہ کاظمی، سیدعمران حسین نقوی اورسیدانوارحسین شاہ کی رہائشگاہ سے برآمد ہوا ،دورانِ جلوس بڑی تعداد میں شرکاء نے زنجیر کا ماتم کرکے پُرسہ پیش کیااور نوحہ خوانی و ماتمداری کی۔جلوس عزاء اپنے مقررہ راستوں سے گز ر کر دربارِ عالیہ سخی شاہ پیاراکاظمی المشہدی میں اختتام پذیر ہوا۔ جہاں پرمجلس عزا سے ذاکر سید اقبال حسین شاہ بجاڑ، ذاکرصفدرعباس نوتکی ،علامہ مطلوب حسین تقی ، مختارحسین شاہ ، اوردیگرنامورعلمائے کرام اورذاکرین عظام نے خطاب کیا۔ اس موقع پرہزاروں شرکائے مجلس عزانے بلندنعروں کی گونج میں ملت جعفریہ کے خالصتاً دینی حقوق کے حصول اور عقائد حقہ ولایت علی عزاداری حسین ؑ اوروطن عزیز کے دفاع کیلئے قائد ملت جعفر یہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی کی قیادت میں تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کی کوششوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے اس عہد کا اظہار کیاکہ پاکیزہ اہداف کیلئے جب بھی آقائے موسوی نے کال دی پوری قوم سر سے کفن باندھ کر میدان عمل میں آجائے گی۔

خانوادہ موسویان کے زیراہتمام علی مسجدمیں مجلسِ شہادت باب الحوائج سے خطاب کرتے ہوئے علامہ سیدقمرحیدرزیدی نے کہا کہ دنیائے انسانیت کوابلیسی قوتوں سے چھٹکارے کیلئے سیرتِ امام موسیٰ کاظم پر کاربند ہونا ہو گا جو باطل پر حق کی فتح و ظفر اور حرمتِ توحیدو رسالت وولایت کی راہ ہے ۔انہوں نے کہا کہ آج بھی دشمنانِ اسلام حقیقی ہادیانِ دین سے خوفزدہ ہیں،یہی وجہ ہے کہ وہ اسلام کے آفاقی پیغام کو دبانے اور روکنے کیلئے ہر قسم کے حربے و ہتھکنڈے استعمال کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ مسائل و مصائب کے خاتمہ کیلئے اسوہِ امام موسیٰ کاظم ؐ کی عملی پیروی وقت کی اہم ترین ضرورت ہے۔مجلس سے مفتی باسم زاہری، جون علی مشہدی اور دیگر نے بھی خطاب کیا۔مجلس کے اختتام پر تابوتِ اسیر بغداد بر آمد کیا گیا ماتمی دستہ سادات ہڈالہ نے نوحہ خوانی و پرسہ داری کی۔

قصرکاظمیہ جسول سیداں میں انجمن مجاہدین حسینی کے زیراہتمام مجلس عزا منعقد ہوئی جس سے علامہ سیدقمرحیدرزیدی، ذاکراقبال حسین شاہ بجاڑ ،ذاکر سجاد حسین شماری،ذاکر علی رضا کھوکھر،ذاکر مشتاق حسین شاہ،ذاکر منظور حسین شاہ کوٹ ادو،مولانا عطاحسین کاظمی،ذاکر ریاض الحسن لیہ اور دیگر ذاکرین نے بھی خطاب کیا۔اس موقع پر جلوسِ تابوت بابُ الحوائج بھی برآمد ہوا ۔کاظمی برادران کے زیراہتمام قصرابوطالب ؑ میں مجلس شہادت اما م موسیٰ کاظم ؑ سے مختلف علماء و ذاکرین نے خطاب کیا۔

اس موقع پر ایم ایچ جعفری کی رہائشگاہ سے جلوسِ تابوت برآمد ہوا جو قصر ابوطالب میں اختتام پذیر ہوا۔سید واجد حسین شاہ کے زیراہتمام مغل آباد میں مجلس عزا ہوئی جس سے مختلف علماء و ذاکرین نے خطاب کیا۔قصرخدیجہ الکبریٰ اسلام آباد،مرکزی امامبارگاہ جی سکس ٹو،مسجد جعفریہ آئی نائن ، امامبارگاہ زین العابدین سیٹلائٹ ٹاؤن میں انجمن فیض پنجتن شعبہ خواتین کے زیراہتمام مجالس شہادت باب الحوائج منعقد ہوئیں جن کے اختتام پر تابوت برآمد ہوئے اور ماتمداری کی گئی۔سید کسراں میں تاریخی جلوس شہادت امام موسی کاظم برآمد ہوکر دربار عالیہ شاہ نذر دیوان پر اختتام پذیر ہوا۔ دربار شاہ چن چراغ میں بھی کاظؐی برادران کے زیر اہتمام جلوس تابوت برآمد ہوا۔

انجمن دختران اسلام ‘ام البنین ڈبلیو ایف کے زیراہتمام مرکزی امامبارگاہ جامعہ المرتضیٰ اسلام آباد میں قائدملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کے اعلان کے مطابق عالمگیر ایام باب الحوائج کی مناسبت سے مجلس عزا کا انعقاد ہوا جس میں ہزاروں خواتین نے شرکت کی اور خانوادہ عصمت و طہارت کی خدمت میں تعزیت و تسلیت پیش کی ۔

مجلس عزا سے خطاب کرتے ہوئے خطیبہ آل نبی ؐ سید ہ بنت علی موسوی نے کہا کہحضرت امام موسیٰ کاظم اؑ یمان و عمل ، زہد و تقویٰ کے مجسمہ کامل تھے، عالم اسلام استعمار سے آزادی حاصل کرنے کیلئے اسوہ امام موسی کاظم ؑ کی عملی پیروی کرنی ہو گی۔انہوں نے کہاکہ ساتویں جانشین رسول ؐ حضرت امام موسیٰ کاظم ؑ نے اپنے دور کے ظالم و جابر حکمرانوں سے نبر د آزما ہوکر آمریت و ملوکیت کا ڈٹ کر مقابلہ کیا اورمخلوقِ خدا کے دلوں میں توحید کے چراغ روشن کیے۔انہوں نے کہا کہ اسیر بغداد حضرت امام موسیٰ کاظم ؑ کی مظلومیت کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ شہادت کے بعد زندان میں آپ ؑ کے ہاتھوں اور پیروں سے ہتھکڑیاں اور بیڑیاں اتاری گئیں اور چار مزدوروں نے جنازہ اٹھا کر بغداد کے پل پر لا کر رکھ دیا۔

انہوں نے کہاکہ حضرت امام موسیٰ ابن جعفرنے آمریت کے دلدادہ ظالم و جابر حکمرانوں کے ظلم کا خندہ پیشانی سے مقابلہ کیا اور توحید و رسالت و ولایت کے چراغ خلقِ خدا کے دلوں میں روشن کرکے دین خداوندی کی نصرت کا حق ادا کردیا۔انہوں نے کہا کہ امام کاظم ؑ کی جوانی و پیروی زنداں میں گزری ،آپ ؑ نے جام شہادت نوش کرنا گوارہ کرلیا مگر فسق و فجور کے سامنے سر نہیں جُھکایا۔انہوں نے کہا کہ پاکیزہ اُسوہِ امام موسیٰ کاظم ؑ دنیا بھر کے حُریت پسندوں اور باضمیر انسانوں کیلئے بہترین نمونہ عمل ہے۔امام موسیٰ کاظم ؑ کا سیرت و کردار رشد و ہدایت کا وہ روشن چراغ ہے جو تاریکی میں ڈوبی ہوئی انسانیت کو تاقیام قیامت راہ ہدایت دکھاتا رہے گا۔آج بھی اگر انسانیت مصائب و آلام سے چھٹکارا چاہتی ہے تو اسے کردار و عمل خانوادہ آل محمد ؑ اپنانا ہوگا۔

اس موقع پر ایک قرارداد میں عالمگیر ایام باب الحوائج منانے پر قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کی بصیرت افروز قیادت کو سلام عقیدت پیش کرتے ہوئے اس عزم کا اعادہ کیا گیا کہ مرکز مکتب تشیع کی آبرومندانہ پالیسی ملک و ملت کی حرمت و بقاء کی ضمانت ہے جس پر عمل پیرا ہوکر تمام دشمنان دین و وطن کی سازشوں کو ناکام کیا جاسکتا ہے۔مجلس عزا سے ذاکرہ شہر بانو نقوی،خطیبہ سیدہ بنت موسیٰ موسوی،ذاکرہ تہذیب زہرا بخاری نے بھی خطاب کیا۔ام البنین ڈبلیو ایف ،گرلز گائیڈاورسکینہ جنریشن نے سیکورٹی کے فرائض سرانجام دیئے۔ مجلس کے اختتام پر تابوتِ اما م موسیٰ کاظم ؑ برآمد ہوا اور ماتمداری کی گئی۔

شدید بارشوں اور طوفان کے باوجود کاظمین میں شہادت امام کاظم ؑ پرحج سے تین گنا بڑ ا اجتماع

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.