6 جولائی اسلام آباد میں شہداء کانفرنس، شہید نشان حیدرؑ سانحہ بری امام ؒ اور شکریال کے شہداء کے مزارات پر چادر پوشی

ولایت نیوز شیئر کریں

وفاقی دارالحکومت میں یوم شہداء قومی جذبے کیساتھ منایا گیا،شہداء کانفرنس کا انعقاد
علامہ بشارت امامی،ذوالفقارعلی راجہ،علامہ تصور نقوی،ارشاد نقوی اور دیگر رہنماؤں کی مزارات پر حاضری، چادرپوشی اورفاتحہ خوانی
محفوظ شہید (نشان حیدر)نے جان کا نذرانہ پیش کرکے قوم کو زندگی دی،شہدائے بری امام کا خون مقدس امانت ہے۔علماء کا خطاب

اسلام آباد( ولایت نیوز)قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کی اپیل پر 6جولائی کو وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں بھی یوم شہداء کی تقریبات منعقد ہوئیں۔صدر ٹی این ایف جے فیڈرل کیپٹل علامہ بشارت حسین امامی،جنرل سیکرٹری ذوالفقار علی راجہ،صدر ضلع غربی علامہ تصور حسین نقوی،صدر ضلع ایسٹ علامہ فصاحت حسین گردیزی، مولانا وضاحت حسین شا ہ،کمانڈر مختارفورس سید عاشق حسین کاظمی،ڈپٹی کمانڈر سید ناظم حسین کاظمی،ایریا کمانڈر سید نزاکت حسین کاظمی،راجہ حمید حسین،زوار اسد حیدری،قدرت الہی حیدری، پروفیسر غلام عباس،سید تاثیر حسین کاظمی، اور دیگر رہنماؤں نے مزارات پر حاضری دیکر شہداء کو خراجِ عقیدت پیش کیا۔

تفصیلات کے مطابق امام بارگاہ قصر سکینہ بنت الحسین شکریال میں سانحہ شکریال میں جام شہادت نوش کرنیوالے سید سخاوت حسین کاظمی،غلام حسین جبکہ پیہونٹ حیدری آباد میں عبدالشکور کی قبور پر چادر چڑھا کر اجتماعی دعا کی گئی۔

ٹی این ایف جے کے وفد نے اسلام آباد کے نواحی گاؤں پنڈ ملکاں میں شہید محمد محفوظ شہید(نشان حیدر)جبکہ پنڈ سنگریال سیکٹر D-12 اسلام آباد میں شہید سانحہ بری امام سید حبدار حسین شاہ بخاری کے مزار پر چادر پوشی کی۔اس موقع پر علامہ ثقلین علی بخاری،علامہ تصور نقوی اور ذوالفقار راجہ نے خطاب کرکے شہیدکے لواحقین سے اظہار تعزیت کیا۔

اس موقع پر شہداء کے لواحقین نے قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی سے یوم شہداء منانے پر اظہار تشکر کیا۔ٹی این ایف جے یوم شہداء کمیٹی کے زیر اہتمام ڈھوک حیدری کورال میں شہداء کانفرنس کا انعقاد کیا گیا جسکی صدارت علامہ بشارت حسین امامی نے کی۔

کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ٹی این ایف جے کی شہدائے سانحہ بری امام کمیٹی کے کنوینر علامہ فخر عباس عابدی نے کہا کہ شہداء کی یاد منانا قوموں کی زندگی کی علامت ہے۔انہوں نے کہا کہ سانحہ بری امام اسلام آباد کی تاریخ کا المناک باب ہے جب درجنوں عزاداروں کو خود کش دھماک کرکے خون میں نہلا دیا گیالیکن قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کی پرامن حکمت عملی اور قائدانہ بصیرت کیوجہ سے اسلام آباد کا امن تباہ کرنے کی سازش کو باہمی سنی شیعہ اتحادکیساتھ ناکام بنادیا گیا۔

انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ دہشتگردوں کو آہنی ہاتھوں سے نمٹنے کیلئے نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کو یقینی بنائے اورنئے ناموں سے کام کرنیوالے ممنوعہ گروپوں کی سرگرمیوں کو سختی کیساتھ روکے۔علامہ بشارت حسین امامی نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ شورکوٹ کے نوجوان ماتمی محمد حسین شاد نے6جولائی 80ء کو اسلام آباد سیکرٹریٹ پر ہونیوالے ملک گیر ایجی ٹیشن میں جام شہادت نوش کرکے نظریہ پاکستان کے تحفظ کا حق ادا کردیا جن کا خون قوم کی مقدس امانت ہے۔انہوں نے اس عہد کا اظہار کیا کہ شہدائے دین و وطن،عساکر پاکستان،پولیس اور سانحات دہشتگردی میں جام شہادت نوش کرجانیوالے شہداء کا خون ہر گز رائیگاں نہیں جانے دیں گے۔کانفرنس سے علامہ تصور حسین نقوی، مولانا فصاحت حسین گردیز ی کے علاوہ دیگر مقررین نے بھی خطاب کیا۔آخر میں شہدائے سانحہ بری امام،سانحہ شکریال،شہدائے عساکر پاکستان و پولیس کے درجات کی بلندی کیلئے اجتماعی دعا اور فاتحہ خوانی کی گئی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.