توہین رسالتؐ کرنے والے جہالت کا راج چاہتے ہیں، حسین ؑقربانی نہ دیتے تو تمام نبیوں کی محنت رائیگاں چلی جاتی، آغا حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

بعثت مصطفویؐ تاریخ انسانیت کا سب سے بڑا انقلاب ہے، توہین کرنے والی قوتیں جہالت کا راج چاہتی ہیں، آغا حامد موسوی
ہردور میں مادیت پرست علمائے سوشیطانی قوتوں کے ہاتھوں استعمال ہوئے، دین کی ترویج دولت نہیں قربانی ودیانت سے ممکن ہوئی
غار حرا سے توحید کی کرن نہ پھوٹتی تو کالی رنگت والوں کی محکومی کبھی ختم نہ ہوتی یورپی خواتین کو بیسیویں صدی میں بھی ووٹ کا حق نہ ملتا
اسلام نے پہلی وحی کی تصدیق کااعزا ز ام المومنین حضرت خدیجۃ الکبریؑ کو عطا کرکے طبقہ نسواں کی توقیر کو عظمت کے آسمان پر پہنچا دیا
مسلم حکمران انائیں اور مفادات قربان کرکے اسلام کے تحفظ کیلئے متحد ہوجائیں،امام حسین ؑقربانی نہ دیتے تو تمام نبیوں کی محنت رائیگاں چلی جاتی
یوم سفر شہادت کے موقع پر بعثت کی صداقت بچانے والے شہداو اسیران کربلا کو خراج عقیدت پیش کیا جائے، شیعہ علماء بورڈ کے نمائندگان سے خطاب

اسلام آباد (ولایت نیوز )سرپرست اعلیٰ سپریم شیعہ علماء بورڈ قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی نے کہاہے کہ بعثت مصطفویؐ تاریخ انسانیت کا سب سے بڑا انقلاب ہے،شان رسالت ؐ میں توہین کرنے والی قوتیں دنیا میں جہالت و دہشت گردی کا راج چاہتی ہیں اور مظلوموں و محروموں کو پیغام مصطفیؐ کے ثمرات سے محروم کرنا چاہتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میدان کربلا سے سلطنت عثمانیہ کے خلاف سازشوں و سوویت یونین کے خاتمے تک ہردور میں مادیت پرست علمائے سوشیطانی قوتوں کے ہاتھوں استعمال ہوئے جس کے سبب اسلام پر انتہا پسندی کے الزامات لگے، دین کی ترویج دولت نہیں قربانی ودیانت سے ممکن ہوئی۔

اسلام نے رنگ نسل اور جنس کے امتیازات مٹا کر مساوات کا عالمگیر درس دیا، غار حرا سے توحید کی کرن نہ پھوٹتی تو کالی رنگت والوں کی محکومی کبھی ختم نہ ہوتی یورپی خواتین کو بیسیویں صدی میں بھی ووٹ کا حق نہ ملتا۔

اسلام نے پہلی وحی کی تصدیق کااعزا ز ایک خاتون ام المومنین حضرت خدیجۃ الکبری سلام اللہ علیھا کو عطا کرکے طبقہ نسواں کی توقیر کو عظمت کے آسمان پر پہنچا دیا۔

27 رجب یوم بعثت بنی نوع انسان کی سب سے بڑی عید ہے جس کی روح بچانے کیلئے فرزند رسول ؐ امام حسین ؑ نے 28رجب کو مدینۃ النبیؐ سے سفر شہادت اختیار کیا، اگر نواسہ رسول ؐ امام حسین ؑ اپنے جانثاروں اور کنبے کی قربانی نہ دیتے تو نبی کریم محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سمیت تمام نبیوں کی محنت رائگاں چلی جاتی۔

مسلم حکمران انائیں اور مفادات قربان کرکے اسلام کے تحفظ کیلئے متحد ہوجائیں، 28رجب یوم سفر شہادت کے موقع پر بعثت کی صداقت بچانے والے شہداو اسیران کربلا کو خراج عقیدت پیش کیا جائے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے 27رجب ’یوم بعثت الرسول ؐ‘کے موقع پر شیعہ علماء بورڈکے نمائندگان سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آغا سیدحامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ اللہ نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بعثت کو انسانیت کیلئے آب حیات قرار دیا جیسا کہ سورہ انفال میں ارشاد ہوا کہ اے ایمان لانے والو! خدا اور اس کے پیغمبر کی دعوت پر لبیک کہو جب بھی وہ تم کو اس پیغام کی طرف بلائیں جو تمہارے لئے زندگی کا مژدہ ہے، گویا پیغام مصطفوی ؐ ذلتوں کے پاتال میں گری انسانیت کو اوج کمال عطا کرگیا ہادی برحق نے عالم انسانیت کو وہ ضابطہ حیات عطا کیا کہ جس کے سائے میں بشریت کمال و انسانیت کی معراج کو با آسانی پا سکتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اللہ نے کائنات میں سب سے پہلے نورمحمدی ؐ کو خلق کیاہر زمانے میں جن نبیوں کو انسانیت کی ہدایت کیلئے بھیجا ان سے بھی نبی کریم کی رسالت پر عہدو پیمان لیا جاتا رہا،پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی بعثت کے وقت ہر طرف کفر و ظلمت کا گھٹا ٹوپ اندھیرا چھایا ہوا تھا، انسانی حقوق اور فرائض کا کوئی دستور وجود نہ رکھتا تھا، لڑکیوں کو زندہ در گور کرنا بہادری کی علامت تھی معمولی باتوں پر صدیوں تک جنگوں کا جاری رہنا معمول تھا انسانیت تباہی و بربادی کے دہانے پرکھڑی تھی جب رحمت حق جوش میں آئی اور حضور اکرم ؐ مبعوث بہ رسالت ہوئے جن کی نوید آدم سے عیسیٰ تک ہر نبی نے دی تھی۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے نہج البلاغہ میں امیر المومنین حضرت علی ابن ابی طالب علیہ السلام کے خطبہ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالی نے نبی کریم ؐکواس وقت بھیجا جب لوگ گمراہی میں سرگرداں تھے فتنوں میں ہا تھ پاؤں ماررہے تھے، خواہشات نے انہیں بہکا دیا تھا اور غرور نے ان کے قدموں میں لغزش پیدا کر دی تھی،جاہلیت نے انہیں سبک سر بنا دیا تھا اور وہ غیر یقینی حالات اور جہالت کی بلاؤں میں حیران وسرگرداں تھے ان حالات میں نبی کریم ؐ نے نصیحت و تبلیغ کا حق ادا کر دیا،سیدھے راستے پر چلے اور لوگوں کوحکمت اور موعظہ حسنہ کی طرف دعوت دی۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ آج انسانیت جن مسائل اور مصائب کے گرداب میں پھنستی چلی جارہی ہے اس کا بنیادی سبب تعللیمات مصطفوی سے دوری ہے، انسانیت اگر نجات اورسرخروئی چاہتی ہے تو اسے دامان مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تھامنا ہوگا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.