اٹلی: کم سن کفن پوش جنت البقیع کی اجڑی قبروں کا نوحہ پڑھتے سڑکوں پر آ گئے

ولایت نیوز شیئر کریں

کورونا وائرس سے شدید متاثر اٹلی میں کفن پوش کمسن عزاداروں کا جنت البقیع کی اجڑی قبروں پر احتجاج
کرونا وائرس کے باعث موت کا رقص بھی ٹی این ایف جے اٹلی کے کارکنوں کو جنت البقیع کے احتجاج سے نہ روک سکا
تاریخی, سیاحتی شہر وریزے کے مرکز میں جنت البقیع کی مسماری پر ماتمی احتجاج
کفن پوش کم سن عزادارون کے تعمیر کرو تعمیر کرو جنت البقیع تعمیر کرو کے نعرے

اٹلی (ولایت نیوز) ملت تشیع کے روحانی پیشوا آغا سید حامد علی شاہ موسوی کے اعلان پر اٹلی کے تاریخی اور سیاحتی شہر وریزے میں تحریک نفاذ فقہ جعفریہ اٹلی کی جانب سے شہر کے مرکز میں جنت البقیع کے مزارات کی تعمیر نو کے ماتمی احتجاج کیا گیا۔

احتجاج میں شریک عزاداروں نے جنت البقیع کی تعمیر نو کے نعروں پر مبنی بینرز اور پلے کارڈز اٹھا رکھے تھے۔احتجاج میں کفن پوش کم سن عزادار بھی شریک تھے جنہوں نے جنت البقیع اور آقائے موسوی کے عکس مبارک اٹھا رکھے تھے۔

احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے ٹی این ایف جے اٹلی کے صدر سید جرار کاظمی نے کہا کہ مغربی دنیا تاریخی آثار کی مسماری کو انسانیت کے خلاف جرم گردانتی ہے لیکن افسوس کے جنت البقیع کے تاریخی اسلامی مزارات کی تاراجی کو ایک صدی ہونے کو ہے لیکن مغرب اس پر مجرمانہ خاموشی اختیار کئے ہوئے ہے۔

ذاکر سید قاسم علی نقوی آف میلان نے مجلس بقیع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ رسول کی بیٹی کی قبر کی مسماری دراصل توہین رسالت ہے۔انہوں نے کہا کہ غیر مسلموں سے اسلام اور رسالت مآب کا احترام کرنے کا کہنے والے مسلم حکمرانوں کو پہلے اپنے کردار پر نظر ڈالنا ہوگی اور جنت البقیع کی عزت رفتہ بحال کئے بغیر مسلمان کس منہ سے مسجد اقصی اور بابری مسجد کے احترام کی بات کرتے ہیں۔

ٹی این ایف جے کے بزرگ رہنما سید مجاہد حسین شاہ نے اپنے خطاب میں ملت تشیع کے روحانی پیشوا آغا سید حامد علی شاہ موسوی کو سلام عقیدت پیش کیا جن کی چار دہائیوں پر مشتمل کوششوں کے نتیجے میں جنت البقیع ایک عالمی مسئلے کی صورت سامنے آرہا ہے اور عراق, ایران و پاکستان کی پارلیمنٹ میں جنت البقیع کی تعمیر نو کی قراردادوں کی منظوری اس کا ثبوت ہے۔

ننے عزادار سید علی مراد نے احتجاجی مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ جنت البقیع کی تعمیر نو کا مسئلہ ہر کلمہ گو مسلمان کے انسانی, مذہبی حقوق اور تاریخ اسلامی کی حفاظت کا مسئلہ ہے جسے نظر انداز کرنے کے نتیجے میں آج اسلامی دنیا مسائل و آلام کا شکار ہے۔

انہوں نے کہا کہ شام, عراق و افغانستان میں تاریخی مذہبی آثار کو نقصان پہنچانے والی سوچ کو جنت البقیع کی تعمیر نو سے ہی شکست دی جاسکتی ہے کیونکہ اس انتہا پسندانہ سوچ نے مکہ مکرمہ اور مدینہ منورہ کے تاریخی مزارات کو زمیں بوس کرنے سے جنم لیا۔

احتجاج سے نسیم صابر گھمن, چوہدری محمد یاسین, سید شہزاد علی, سید عمران شاہ, چوہدری عابد محمود, سید محمد علی اور امیر علی نے بھی خطاب کیا۔

احتجاج کے احتتام پر نوحہ خوانی و ماتم داری کی گئی اور خاتون جنت و آئمہ البقیع کو ان کی مزارات کی مسماری پر پرسہ پیش کیا گیا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.