شہادت علی ؑ کے جلوس کی پاداش میں ٹی این ایف جے چکوال کے صدر کی گرفتاری کی مذمت؛ کوئی طاقت مکتب تشیع کو دیوار سے نہیں لگا سکتی،علامہ ابو الحسن تقی

ولایت نیوز شیئر کریں

عزاداری میں روکاوٹیں، ٹی این ایف جے چکوال کے ضلعی صدرکی گرفتاری قابل مذمت، متعصبانہ پولیس کاروائیوں کانوٹس لیاجائے،علامہ ابوالحسن تقی
صادقِ آل محمد ؑ سے علمی عجائبات کا ظہور ہوا۔ عشرہ صادق آل محمد ؑ کی مجالس سے علماء و ذاکرین کا خطاب،تابوت صادق آل محمد ؑ کی برآمدگی
ٹی این ایف جے چکوال کے صدرکی گرفتاری، جھنگ میں خواتین پروحشیانہ تشددچادرچاردیواری کے تقدس کی پامالی ہے۔ہیئت طلبائے اسلامیہ
کالعدم گروپوں کی سرپرستی میں کاکام کرنے والے پولیس افسران، چکوال کے ایس ایچ اوتھانہ سٹی کومعطل کرکے محکمانہ کارؤائی کی جائے
ایس ایچ اوچکوال سٹی کا فخریہ طورپر”ابن زیاد“کہلوانے نوٹس لیاجائے،عزاداری کاتحفظ بنیادی،آئینی حق ہے۔ ہنگامی اجلاس کی قراردادیں

راولپنڈی،چکوال (ولایت نیوز )قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی کے اعلان کردہ عشرہ صادق آل محمد ؐ کے پروگرام سوموار کو دوسرے دن بھی جاری رہے۔ جامع مساجد، امام بارگاہوں اور عزاخانوں میں احتیاطی تدابیر پر عمل کرتے ہوئے مجالس عزا اور پرسہ داری کی گئی۔ علمائے کرام نے حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام کی سیرت و کردار اور شریعت محمدی ؐ کیلئے انکے کارہائے گراں قدر اور علمی خدمات پر روشنی ڈالی۔

اس موقع پراسلام کی سربلندی، پاکستان کے استحکام وسلامتی،کرونا کی عالمی وبا کے خاتمے کیلئے دعائیں اور مناجات کی گئیں۔علمائے کرام نے کروناکی آڑمیں عزاداری میں پولیس روکاوٹوں،شہادت علی ؑ کا جلوس نکالنے کی پاداش میں ٹی این ایف جے چکوال کے ضلعی صدرکی گرفتاری اورعزاداروں کیخلاف ملک بھرمیں مقدمات کی مذمت کرتے ہوئے حکومت سے متعصبانہ پولیس کاروائیوں کانوٹس لینے کاپرزورمطالبہ کیا۔

ٹی این ایف جے کے ریجنل ناظم الامورعلامہ سیدابوالحسن تقی نے مجلس سے خطاب کرتے ہوئے اسوہ ِامام جعفرصادق ؑ کی عملی پیروی کو دورِ حاضرہ کے مسائل و مشکلات کا بہترین حل قراردیا۔انہوں نے کہا کہ اپنا مذہبی فریضہ ادا کرتے ہوئے شہادت علی ابن ابی طالب ؑ کا جلوس نکالنے کی پاداش میں ٹی این ایف جے چکوال کے صدر کی گرفتاری قابل مذمت ہے بعض طاقتیں بھول میں ہیں کوئی طاقت مکتب تشیع کو دیوار سے لگانے میں کامیاب نہیں ہو سکتی ۔

ابو الحسن تقی نے وزیر اعظم اور وزیر اعلی کو متوجہ کیا کہ حکومت کے بعض عناصر مکتب تشیع کے خلاف انتقامی کاروائی پر اترے ہوئے ہیں جس کا سب سے بڑا ثبوت چکوال میں پہلے عشرہ صادق ۤل محمد ؐ کی احتجاجی ریلی کے شرکا ئ کی گرفتار ی اور ملت کے عمائدین پر جھوٹے مقدمے قائم کرنا ہے اور پھراسیر عزاداروں کی ضمانت کے موقع پر ٹی این ایف جے چکوال کے صدر زین العباس موسوی کو 21 رمضان کا جلوس نکالنے کے جرم میں گرفتاری ہے جس سے ثابت ہوتا ہے کہ انتظامیہ کی بعض کالی بھیڑیں حکومت کو مکتب تشیع سے لڑانا چاہتی ہیں۔ جو ملکی سلامتی کے منافی ہے ۔

علامہ ابو الحسن تقی نے دربار شاہ پیارا میں شہادت امام جعفر صادق علیہ السلام کے جلوس پر ایف آئی آر کے اندراج کی بھی مذمت کی اور کہا کہ عزاداری بنیادی حق ہے جس پر کبھی کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ جھنگ چکوال راولپنڈی ملتان لاہور نارووال گجرات ڈیرہ غازی خان میں عزاداروں پر قائم مقدمات کو خارج کیا جائے ۔

۔جامع مسجد و اامام بارگاہ ترلائی کلاں میں عشرہ صادق آل محمد ؑ کی مجلس سے علامہ بشار ت حسین امامی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سلسلہ امامت کے چھٹے تاجدار امام جعفر صادق ؑ نے علوم و فنون کے میدان میں جو شاگرد پیدا کئے اُن میں آپ کے صرف ایک شاگرد جابر بن حیان کے علوم پر مشرق و مغرب دونوں ناز کر رہے ہیں،آپ کی صداقت آپ کے جدِ امجد حضور ختمی مرتبتؐ کی طرح شہرہ آفاق اور ضرب المثل تھی۔انہوں نے کہا کہ امام صادق نے شریعت محمدیؐ کی ترویج و تدوین کے وہ باب رقم کئے جو فقہ جعفریہ سے موسوم ہیں۔علامہ امامی نے باور کرایا کہ امام صادق وحی خدا کے ترجمان اورعلم خدا کے خزینہ دار معصوم ہیں،خداوندِعالم نے انکی اطاعت کا حکم دیا ہے۔مسجدحیدریہ چٹیاں ہٹیاں میں مجلس سے علامہ زوارحسین مدنی نے خطاب کیا اختتام پرجلوس تابوت برآمدہواجسمیں مرکزی ماتمی دستہ، ماتمی دستہ شاہ چن چراغ بادشاہ نے ماتمداری کی۔

درایں اثنا ہیئت طلبائے اسلامیہ پاکستان کاہنگامی اجلاس تنظیم کے جنرل سیکرٹری سیدمہدی بخاری کی صدارت میں منعقدہواجس میں موجودہ حالات بالخصوص مساجداورامام بارگاہوں میں تمام تراحتیاطی تدابیرکے ساتھ ہونے والی عبادات پرمختلف قسم کی پابندیوں اورپویس کی جانب سے خوف وہراس پھیلانے پرتشویش کااظہارکیاگیا۔

اجلاس میں 19تا21رمضان شہادت امیرالمومنین کے ماتمی جلوسوں میں پولیس روکاوٹوں بالخصوص چکوال میں تحریک نفاذفقہ جعفریہ کے ضلعی صدرسیدزین موسوی کی گرفتاری اورجھنگ میں خواتین پرپولیس تشددکی وحشیانہ کاروائی کرکے چادراورچاردیواری کے تقدس کی پامالی کی پرزورمذمت کی گئی۔ اجلاس میں ایک قراردادکے ذریعے حکومت سے پرزورمطالبہ کیاگیاکہ وہ کروناکی آڑمیں مذہبی آزادی سلب کرنے کے ہتھکنڈے اورمکتب تشیع کودیوارسے لگانے کی پالیسی ترک کرے، عزاداری کے روایتی ماتمی جلوسوں کوتحفظ فراہم کرے جوبنیادی اورآئینی حق ہے۔ قراردادمیں کالعدم گروپوں کی خفیہ سرپرستی میں کاکام کرنے والے انتظامیہ اورپولیس افسران بشمول چکوال کے ایس ایچ اوتھانہ سٹی منصورمظہر اور اے سی تنویرکومعطل کرکے محکمانہ کارؤائی کی جائے۔ حکومت ایس ایچ اوکی جانب سے خود کوفخریہ طورپر”ابن زیاد“کہلوانے کافوری نوٹس لے۔اجلاس میں 8شوال کویوم انہدام جنت البقیع اور15شوال کوعشرہ صادق آل محمدؐ اورحضرت عمربن عبدالعزیزکے مزارکی بے حرمتی کے خلاف نکالے گئی احتجاجی ریلیوں کے بانیاں کیخلاف مقدمات درج کرنے کی بھی مذمت کی گئی اورحکومت سے ان کے فوری اخراج کامطالبہ کیاگیا۔ سیدمہدی بخاری نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ اگرانتظامیہ نے اپنارویہ تبدیل نہ کیاتوہم بھی قائدملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی سے حکومتی پالیسی کے بارے میں لائحہ دینے کی اپیل کریں گے اورانکے حکم پرپاکستان کے تمام عزاداران، بانیاں مجالس اورماتمی حضرات بھرپورعملدرآمدکریں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.