قائد ملت جعفریہ آقائے موسوی نے سائنسی قمری کیلنڈر مسترد کردیا،یوم شہادت مولائے کائنات حضرت علی ابن ابی طالب ؑپر میڈیا سے تاریخی گفتگو

ولایت نیوز شیئر کریں

شہادت شیر ِخداؑ حضرت علی المرتضیٰ ؑپر ملک گیر مجالس وماتمی جلوس:سائنسی کیلنڈر مسترداسلام نہیں حکمران خطرے میں ہیں،آغا حامد موسوی

کتنی ہی لوڈ شیڈنگ کی جاتی رہے ذکر علی ؑ کی روشنی ہمیشہ باقی رہے گی، علی ابن ابی طالب ؑ نے عدل و انصاف کو سیاست پر ترجیح دی

ڈوبتی معیشت بچانے کیلئے شعب ابی طالب ؑ کو شعار بناناہو گا، دشمنوں کو اپنے مفادات جبکہ ہمارے حکمرانوں سیاستدانوں کو کرسی عزیزہے

39 ملکی اتحاد پاکستان پر حملے کے وقت کہاں تھا؟ اسرائیلی پائیلٹ کی گرفتاری چھپ نہیں سکتی،آج ایران نشانہ تو کل دوسرے بھی بنیں گے

مسلمان بڑی طاقتوں سے نہ گھبرائیں باہم متحد ہو جائیں جمعۃ الوداع یوم القدس حمایت مظلومین کے طور پر منائیں گے،ایکشن پلان پر عمل کیا جائے

مرکزی جلوس میں میڈیا و عزاداروں سے قائد ملت جعفریہ کا خطاب اہلسنت علماء تاجروں و میلاد کمیٹی کے عہدیداروں کی تعزیت، عزاداروں کا ماتم زنجیر و قمہ زنی

اسلام آباد /راولپنڈی ( ولایت نیوز) شیر خدا مشکل کشامولائے کائنا ت امیر المومنین حضرت علی ابن ابی طالب ؑ کایوم شہادت پیر کو دنیا بھر کی طرح پورے پاکستان میں عقیدت و احترام اورروایتی مذہبی جذبے کیساتھ منا یا گیا۔ اس موقع پرملک کے تمام چھوٹے بڑے شہروں،قصبوں اور دیہاتوں میں تابوتِ شیر خداؑ کے جلوس برآمد ہوئے ماتمی عزاداروں نے سینہ کوبی نوحہ خوانی زنجیر زنی قمہ زنی کرکے خانوادہ رسالت ؐ کی بارگاہ میں شہادت علی ؑ کا پرسہ پیش کیا۔

اس موقع پر عقیدت و محبت سے لبریز شدید رقت انگیز مناظر دیکھنے میں آئے،مساجد و امامبارگاہوں میں علمائے کرام،واعظین و ذاکرین نے مجالس عزا سے خطاب کرتے ہوئے سیرتِ امیر المومنین حضرت علی ؑ پر تفصیلی روشنی ڈالی۔جڑواں شہروں راولپنڈی اسلام آباد کا مرکزی جلوس تابوت موہن پورہ سے برآمد ہوا جس میں سرپرست اعلیٰ سپریم شیعہ علماء بوڈ قائد ملت جعفریہ آغاسید حامدعلی شاہ موسوی نے شرکت کرکے تبرکات کی زیارت کی اور ماتمداری میں حصہ لیا۔

اس موقع پر ماتمی عزاداروں اور قومی و بین الاقوامی میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے آغا حامد موسوی نے کہاکہ سائنسی قمری کیلنڈر کو مسترد کرتے ہیں محمد ؐ کا حلال قیامت تک حلال ہے اور محمد ؐ کا حرام قیامت تک حرام ہے سائنس کی دریافتیں حتمی نہیں سائنس اسلام کے پیچھے چلتی ہے صرف اللہ رسول آل اطہار اور پاکیزہ صحابہ کبار کو مانتے ہیں،خواہ کتنی ہی لوڈ شیڈنگ کی جاتی رہے ذکر علی ؑ کی روشنی ہمیشہ باقی رہے گی، علی ابن ابی طالب ؑ نے عدل و انصاف کو سیاست پر ترجیح دی یہاں الٹ ہو رہا ہے،ڈوبتی معیشت بچانے کیلئے شعب ابی طالب ؑ کو شعار بناناہو گا،مسلم حکمران اپنے بچاؤ کیلئے حرمین اور اسلام کا نام استعمال کررہے ہیں اسلام کو کوئی خطرہ نہیں اسلام کا محافظ اللہ ہے مسلمان حکمران اسلام کوڈھال نہ بنائیں بلکہ اہلبیت کی طرح اسلام اور حرمین کی ڈھال بن جائیں، مسلمانوں کو تقسیم در تقسیم کیا جارہا ہے عرب لیگ عرب و عجم میں تفریق کیلئے بنائی گئی اور او آئی سی کو پیچھے دھکیلا گیا 39 ملکی اتحاد پاکستان پر حملے کے وقت کہاں تھا پاکستان پر حملے میں ملوث اسرائیلی پائلٹ کی گرفتاری چھپ نہیں سکتی مسلمان بڑی طاقتوں سے نہ گھبرائیں باہم متحد ہو جائیں اور اللہ پر بھروسہ کریں تو 313 لاکھوں پر فتحیاب ہو سکتے ہیں مسلمان شیاطین ثلاثہ سے جان چھڑائیں،،پاکستان کوپہلے دن سے ازلی دشمن کی بیرونی دہشت گردی کا سامناہے پاکستان افغانستان میں مداخلت نہ کرتا تو کبھی اندرونی دہشت گردی کانشانہ نہ بنتا ایکشن۔پلان پر عمل۔ہوتا تو دہشت گردی ختم ہوجاتی حکومت کھوج لگائے کونسی قوتیں ایکشن پلان پر عمل میں حائل ہیں۔

ملک کی دگرگوں معاشی صورتحال پر سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ استعماری قوتوں اور اسلام وپاکستان دشمنوں کو اپنے مفادات عزیز ہیں جبکہ ہمارے حکمرانوں سیاستدانوں کو کرسی عزیزہے کرسی کے حصول اور بچاؤ کیلئے کام کیا جارہا ہے ہم شعب ابی طالبؑ میں گھاس کھا کر نہ جھکنے والوں کے پیروکار ہیں۔ایک سوال کے جواب میں آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ مسلم حکمران یا د رکھیں آج اگر ایران نشانہ ہے تو کل دوسرے مما لک بھی بنیں گے، ایران نے سب سے پہلے پاکستان کوتسلیم کیا قائد اعظم نے ایران کو سب سے بہترین دوست قرار دیا۔

فضائل حضرت علی ابن ابی طالب ؑ بیان کرتے ہوئے آقائے موسوی نے کہا کہ علی ابن ابی طالب شاہکار قدرت ہیں علی ایک لحظہ بھی ظلم برداشت نہیں کرسکتے تھے علی ابن ابی طالبؑ نے عدل وانصاف کوسیاست پر ترجیح دی یہی عدل ان کی شہادت کا سبب بنارسول نے علی کو بہترین فیصلہ کرنے والا قرار دیا جن سا عادل دنیامیں پیدا نہیں ہوا علیؑ کا انصاف ایسا تھا کہ مرحب کو دو ٹکڑے کیا تو دونوں حصے برابر تھے،علی ابن ابی طالبؑ نے رسول ص کی آغوش میں آنکھ کھولی اور رسول کی آنکھ علی کی گود میں بند ہوئی علی ابن ابی طالب نے حضرت خدیجہ کے ہمراہ سب سے پہلے رسول کے ساتھ نماز ادا کی، علی ؑ نے دعوت ذوی العشیرہ میں رسول کی تائید کرکے نبی کے وصی وزیر اور خلیفہ ہونے کا اعزاز پایا،علی ابن ابی طالب ع نے شب ہجرت رسول ص کے بستر پر سو کر جانثاری کی انمول مثا ل کی، مواخات کے روز رسول کریم ص نے علی ابن ابی طالب کو۔دنیا و آخرت میں بھائی قرار دیا، غزوہ احد میں جب سب رسول کو چھوڑ کر بھاگ گئے علی ابن ابی طالب ع نے رسول ص کے ساتھ سینہ سپر رہے،غزوہخندق کے۔موقع پر عمر بن۔عبدود کے مقابلہ میں رسول ص نے علی ابن ابی طالب کی ضربت کو ثقلین کی عبادت سے افضل قرار دیا،صلح حدیبیہ علی ابن ابی طالب ع کے ہاتھوں رقم ہوئی۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ خیبر کا قلعہ جب 39دن تک فتح نہ ہوا تو نبی کریم نے علی کو کرار اور غیر فرا ر کا لقب عطا کرتے ہوئے علم عطا کیا اور یہودیت پر اسلام کو عظیم فتح حاصل ہوئی، مباہلہ کے میدان میں سیدہ کائنات و حسنین کریمین کے ساتھ رسول کریم علی ابن ابی طالب ؑکو لے کر گئے اور نصرانیت اسلام کے سامنے گھٹنے ٹیکنے پر مجبور ہو گئی، خم غدیر میں رسول اللہ ص نے فرمایا کہ جس کا میں مولا اس کے علی ع مولا ہیں حضرت عمر خطاب نے سب سے پہلے علی کو مولا بننے پر مبارک باد کہی،۔یہ سوال آج بھی تاریخ میں گونج رہا ہے کہ جب رسول کی زندگی میں ہر میدان میں علی ؑ فاتح رہے تو دیگر ادوار میں علی ؑ سے فیض کیوں حاصل نہ کیا گیاخلفائے راشدین کے دور میں ہر مشکل وقت میں علی نے اسلام کی حفاظت کی حضرت عمر ابن خطاب ؓ کا قول تاریخ میں تحریر ہے کہ اگرعلیؑ نہ ہوتے تو عمرؓہلاک ہو جاتا عالم اسلام اگر سرخروئی چاہتا ہے تو اسے دامن مصطفی ؐ و مرتضی تھامنا ہوگا۔

قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے اس موقع پر اعلان کیا کہ جمعۃ الوداع کو یوم القدس حمایت مظلومین منا کر مظلومین عالم سے اظہار یکجہتی کریں گے۔

اس موقع پرماتمی تنظیموں کے سالاروں، شیعہ سنی اکابرین کے علاوہ ڈویژنل خطیب حافظ اقبال رضوی کی زیر سرکر دگی اہلسنت عمائدین اور ندیم شیخ کی سرکردگی میں مرکزی میلاد کمیٹی و انجمن تاجران کے عہدیداران نے قائد ملت جعفریہ آغا سیدحامد علی شاہ موسوی سے ملاقات کرکے شہادت علی ابن ابی طالب پرتعزیت پیش کی۔

شہادت حضرت علی ؑ کے مرکزی جلوس میں انتظامیہ کی جانب سے سیکیورٹی کے خصوصی انتظامات کئے گئے تھے۔ پولیس کی بھاری نفری کے علاوہ مختار فورس‘ابراہیم سکاؤٹس اوپن گروپ کے سینکڑوں رضا کاروں نے حفاظتی انتظامات سنبھال رکھے تھے۔ جلوسِ عزا میں راولپنڈی ریجن کے بیسیوں ماتمی حلقوں اور ہزاروں غمگساروں نے شرکت کی۔ناولٹی چوک میں تابوت پہنچنے پر زبردست زنجیر زنی کی گئی۔مرکزی جلوس تابوت فوارہ چوک اورٹرنک بازار سے ہوتا ہوا سحری کے وقت امامبارگاہ کرنل مقبول حسین پہنچ کر اختتام پذیر ہوا۔دورانِ جلوس کشمیری بازار میں مختار سٹوڈنٹس آرگنائزیشن راولپنڈی کی جانب سے عزاداری کیمپ لگایا گیا تھا جہاں شرکاء کیلئے سبیل کاخصوصی بندوبست تھاجبکہ ابراہیم سکاؤٹس کی جانب سے زنجیرزنوں کیلئے فرسٹ ایڈمیڈیکل کیمپ لگایاگیا۔

درایں اثنا ہیڈ کوارٹر مکتب تشیع میں موصولہ اطلاعات کے مطابق کراچی لاہور کوئٹہ ملتان فیصل آباد پشاورگجرات حیدر آباد سکھر لاڑکانہ جیکب آباد بہاولپورگوجرانوالہ سیالکوٹ کوہاٹ ہنگو پاراچنار ڈیرہ اسماعیل خان گلگت بلتستان مظفر آباد باغ میر پور ڈڈیال آزاد کشمیرسمیت تمام چھوٹے بڑے شہروں قصبوں دیہات میں شہادت علی ابن ابی طالب ؑ کی مجالس منعقد ہوئیں اور تابوت کے جلوس نکالے گئے جن میں بلاتفریق مسالک و مکاتب اسلامیان پاکستان نے شرکت کرکے بارگاہ مصطفوی ؐ میں حضرت علی ابن ابی طالب کا پرسہ پیش کیا۔

قائد ملت جعفریہ کی میڈیا ٹاک کی مکمل تفصیل سنئے والعصر نیوز پر

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.