پاکستان اور افغانستان میں تمام دہشتگرد کاروائیوں میں بھارت ملوث ہے شیطانی سازشوں کے خاتمہ کیلئے مسلم ممالک کو پیغام مصطفوی ؐ پر عمل پیرا ہو نا ہوگا ، آغا حامد موسوی 

ولایت نیوز شیئر کریں

وزیر اعظم کے دورہ چین کے بعد افغانستان پاکستان کے واقعات ثابت کرتے ہیں کہ دال میں کچھ کالا نہیں بلکہ پوری دال ہی کالی ہے، آغا حامد موسوی

کرتار پورہ راہداری کھولنا خوش آئند ہے ،بھارت کے ساتھ تعلقات کا ہر قدم ازلی دشمن کی مکارانہ فطرت کو سامنے رکھ کراٹھایا جائے

مسلم ممالک دوسر ی ریاستوں میں مداخلت کے بجائے پہلے اپنے ملکوں کے مسائل حل کریں، تنازعات کیلئے اوآئی سی کا فوم استعمال کیا جائے

مسلم ممالک مسائل کے حل کیلئے واشنگٹن و ماسکو کے بجائے مدینہ و نجف کا رخ کریں، پیغام مصطفوی ؐ پر عمل پیرا ہو ں ، صوبائی وحدت و اخوت کمیٹی سے خطاب

اسلام آباد( ولایت نیوز)سرپرست اعلیٰ سپریم شیعہ علماء بورڈ تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے سربراہ آغاسید حامدعلی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ صرف پاکستان ہی نہیں افغانستان میں ہونیوالی تمام دہشتگرد کاروائیوں میں بھی ہندوستان ملوث ہے افغانستان کو پاکستان سے متصادم کرنا بھارتی ایجنڈا ہے افغانستان منی بھارت نہ بنے چانکیائی سازشیں ناکام کرنے اور امن کے قیام کیلئے برادر ممالک کو مشترکہ حکمت عملی اپنانا ہوگی ، سکھ برادری کو خوش کرنے کیلئے کرتار پورہ راہداری کھولنا خوش آئند ہے بھارت کے ساتھ تعلقات کا ہر قدم پھونک پھونک کر اورازلی دشمن کی مکارانہ فطرت کو سامنے رکھ کراٹھایا جائے پاکستان نے ہمیشہ خیر سگالی کے اقدامات اٹھائے لیکن کیا ہندوستان بھی پاکستانی مسلمانوں کیلئے اجمیر شریف نظام الدین اولیا ،دیو بند بریلی حضرت بل اور چرار شریف کے راستے کھولنے پر آمادہ ہوسکتا ہے ؟ ،مسلم ممالک اپنے مسائل کے حل کیلئے واشنگٹن و ماسکو کے بجائے مدینہ و نجف کا رخ کریں مسلم ریاستوں کو بدامنی ،افتراق ،انتشار اور عدم استحکام سے دوچارکرنا عالمی ایجنڈا ہے شیطانی سازشوں کو ناکام کرنے کیلئے مسلم ممالک کو پیغام مصطفوی ؐ پر عمل پیرا ہو نا ہوگا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے آغا نواز علی کیانی کی سرکردگی میں صوبائی ہفتہ وحدت و اخوت کمیٹی خیبر پختو نخواہ کے عہدیداران سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ پاکستانی وزیر اعظم کے دورہ چین کے موقع پر مولانا سمیع الحق کا قتل ،طاہر داوڑ کا اغوا اور بے دردی سے قتل پھر اسکی لاش پاکستانی حکومت کے بجائے بیرونی ایجنڈے پر کام کرنے والوں کے سپردکرنا، عید میلاد النبی ؐ پر کابل اور پھر پاکستان میں دہشت گرد سانحات ثابت کرتے ہیں کہ دال میں کچھ کالا نہیں بلکہ پوری دال ہی کالی ہے۔

انہوں نے کہا کہ دہشتگردی کی نئی لہر خفیہ اداروں کیساتھ ساتھ حکمرانوں اور سیاستدانوں کی کارکردگی پر سوالیہ نشان ہے کہ نیشنل ایکشن پلان کی تمام شقوں پر عملدرآمد کیوں نہیں کرایا گیا؟ جبکہ سانحہ آرمی پبلک سکول پشاور کے بعد نیشنل ایکشن پلا ن تمام جماعتوں کے اتفاق سے تیار ہوا ، بیرونی سازشوں کے ساتھ ساتھ ملک کے اندر موجوددہشتگردوں کی پشت پناہ اور سہولت کار کالعدم تنظیمیں دہشت گردی کی نئی لہر میں مکمل ملوث ہیں جونہ صرف نئے پرانے ناموں کھلم کھلاسے سرگرم عمل ہیں انتخابات میں حصہ لے رہی ہیں،سیاسی اتحادوں میں شامل ہیں اور میڈیا پروگراموں میں حصہ لے کر اپنی پروجیکشن بھی کروا رہی ہیں لیکن کوئی ان کے بارے میں ایکشن لینے کو تیار نہیں دہشتگردی کا قلع قمع کرنے کیلئے نیشنل ایکشن پلان کی ایک ایک شق پر اشد ضروری ہے ،بصورت دیگر حالات اس سے بھی زیادہ بدتر ہوسکتے ہیں۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ مسلم ممالک دوسر ے مسلم ممالک کی فکرچھوڑیں دوسرے ممالک میں مداخلت کے بجائے پہلے اپنے اپنے ملکوں کے مسائل حل کریں،عوام کو انکے حقوق کی ادائیگی کریں ،انسانی حقوق کا ریکارڈ بہتر بنائیں برادرممالک کے مسائل کے حل کیلئے او آئی سی کا فورم استعمال کیا جائے لیکن بدقسمتی سے مسلم ممالک اپنے لیے آج تک ویٹو کا حق حاصل نہیں کرسکے اور وہ آج بھی اپنے مسائل کے حل کیلئے استعماری سرغنہ امریکہ کی طرف ر خ کرتے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ اقوام متحدہ مسلم دشمنی اور منافقت روز روشن کی طرح عیاں ہے جس نے مشرقی تیمور سوڈان میں استصواب رائے کرانے کیلئے قطعا دیر نہیں لگائی لیکن کشمیر وفلسطین کے تنازعات اقوا م متحدہ کے قیام سے لے کر آج تک لا ینحل ہیں ،مظلوم کشمیریوں،فلسطینیوں پر عرصہ حیات تنگ ہے لیکن کوئی انکا پرسان حال نہیں۔

قائد ملت جعفریہ آقائے موسوی نے واضح کیا کہ اگر مسلم ممالک اپنی بقاء،سلامتی اور عزت وحرمت چاہتے ہیں تو انہیں او آئی سی کو فعال کرنا ہوگا اور ویٹو کا حق حاصل کرنا ہوگا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.