شاہ شمسؒ کے دیس ملتان میں جنت البقیع کے انہدام کے خلاف علماء کا خونی پرسہ و احتجاج

ولایت نیوز شیئر کریں

عالمی ادارے جنت البقیع ، جنت المعلیٰ کی ازسرنوتعمیر کیلئے اپنا کردار ادا کریں۔ٹی این ایف جے

جنت البقیع ، جنت المعلیٰ کی تزئین و تعمیر اور انکی عظمتِ رفتہ کی بحالی کیلئے امانت و دیانت کے ساتھ جدو جہد جاری رکھیں گے۔علامہ سیدزاہدکاظمی

8شوال کا احتجاج کسی ذات یا جماعت کیخلاف نہیں بلکہ عظیم اسلامی ورثے کے تحفظ کیلئے ہے۔ علامہ باقرنقوی، حشمت رضا بہلول کاریلی سے خطاب

پریس کلب ملتان کے سامنے زبردست زنجیرزنی

ملتان (ولایت نیوز) قائد ملتِ جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کے اعلان کے مطابق ہفتہ کو عالمگیر یوم انہدام جنت البقیع کے موقع پر تحریک نفاذفقہ جعفریہ ریجنل کونسل ملتان کی جانب سے پریس کلب سے پر امن احتجاجی ریلی نکالی گئی احتجاجی ماتمی جلوس کی قیادت علامہ سید زاہد عباس کاظمی، علامہ سید باقر علی نقوی، خطیب مسجد حیدریہ گلگشت مولانا سید مجاہد نقوی، معروف شاعر جناب حشمت رضا بہلول، علامہ آغا محمد رضا، پروفیسر شاہد عباس، ماتمی سالار سید علمدار نقوی، سینئر ایڈووکیٹ ہائی کورٹ ناصر حسین حیدری و دیگر شخصیات نے کی۔۔

مظاہرین نے قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کی تصادیر، مختلف بینر اور پلے کارڈ اُٹھا رکھے تھے جن پر جنت البقیع کی ازسرنوتعمیر کیلئے مطالبات درج تھے۔اس موقع پر علمائے کرام نے زبردست زنجیرزنی ، ماتمداری ، سینہ کوبی کرکے بارگاہ رسالت وامامت میں پرسہ پیش کیا۔

ریلی کے شرکاء خطاب کرتے ہوئے علامہ سید زاہدعباس کاظمی نے کہا کہ اگر امت مسلمہ جنت البقیع اور جنت المعلیٰ کی مسماری کا راستہ روک لیتی تو کسی کو بیت المقدس کو آگ لگانے کی جرات نہ ہوتی ۔انہوں نے کہا کہ 8شوال کا احتجاج کسی ذات یا جماعت کیخلاف نہیں بلکہ عظیم اسلامی اور انسانیت کے ورثے کے تحفظ کے لئے ہے ۔اُنہوں نے اقوام متحدہ سمیت تمام عالمی اداروں پر زوردیا ہے کہ وہ جنت البقیع اور جنت المعلیٰ کے مزاراتِ مقدسہ کی ازسرنوتعمیر اور عظمتِ رفتہ کی بحالی کی طرف توجہ دیں کیونکہ اسی میں پوری انسانیت کی اصلاح و فلاح ،کامیابی و سرفرازی اور خوش بختی و سعادت کا راز مضمر ہے۔انہوں نے حکومتِ پاکستان سے مطالبہ کیا کہ برادر اسلامی ملک سعودی عرب پر زوردیا جائے کہ حکومتِ سعودی عرب جنت البقیع اور جنت المعلیٰ کے تاریخی آثار و علائم کی تعمیر کرے جو21مئی1985کے جونیجو موسوی معاہدہ میں بھی شامل ہیں ۔

انہوں نے یو این او کے ادارے یونیسکو (جسکی آثار قدیمہ کا تحفظ کرنا ذمہ داری ہے )آئی سی سی ، یورپی یونین ، او آئی سی، عرب لیگ ، سارک سے پر زور دردمندانہ اپیل کی کہ وہ اس اہم عالمی، بشری ،آئینی ودینی مسئلہ کے حل کی طرف توجہ مبذول کرے۔ انہوں نے کہا کہ دنیائے انسانیت بالخصوص مظلوم اقوام ، محرومین ،مستضعفین و مظلومین کے حقوق کی بازیابی کی جدوجہد کے ساتھ ساتھ جنت البقیع ،جنت المعلیٰ کی عظمتِ رفتہ کو بحال کرانے کیلئے اپنا کردا ر ادا کریں ،بصور ت دیگر مصائب الام کیلئے تیار رہیں کیونکہ حکم قرآنی کی رو سے جس نے ذرہ برابرنیکی و برائی کی ہو گی وہ اسے ضرور دیکھے گا ۔

علامہ سیدباقرعلی نقوی نے باورکرایا کہ دین اسلام تمام نوع انسانی کے حقوق کا احترام کرتا ہے ۔سفید و سیاہ ، عرب و عجم ، غلام و آقاسب کے حقوق کا محافظ ہے اوراس میں جبر نہیں ہے لیکن انتہائی دکھ ہے ۸ شوال ۱۳۴۴ ھ آل سعود نے جبر و استبدادکی وہ تاریخ رقم کی جو ناقابل فراموش ہے ۔ انہوں نے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ 85سال کا عرصہ بیت چکا ہے جنت المعلیٰ وجنت البقیع مسمار پڑے ہیں لیکن عالم خاموش ہے اقوام متحدہ لب بمہر ہے ،مسلم ریاستوں جسکے ممبر ہیں آج تلک اس سانحہ فاجعہ کی طرف متوجہ نہیں ہوئے جس کی وجہ سے ان کے مقدر میں ذلت و رسوائی ہے ، عالمی استعمار کی مظلوم اقوام ، عالم اسلام پر چڑھائی ہے ،کشمیر و فلسطین پہلے ہی لا ینحل پڑے تھے۔

حشمت رضا بہلول نے کہا کہ ان مصائب و آلام کی سب سے اہم ترین وجہ یہ ہے کہ ذواتِ مقدسہ جنکی محبت واجب قرار دی گئی تھی انکے اصولوں سے نہ صرف روگردانی کی جارہی ہے بلکہ انکی قبور و آثار کو پامال و مسمار کردیا گیا ۔

محمد عباس کاظمی نیاپنے خطاب میں اس عہد کا اظہار کیا کہ وطن عزیز کی حرمت و سلامتی، دین و شریعت کی سربلندی ،خانوادہ محمدؐ و آل محمد ؑ کے آثار و قبور ،جنت البقیع ، جنت المعلیٰ کی تزئین و تعمیر اور انکی عظمتِ رفتہ کی بحالی کیلئے امانت و دیانت کے ساتھ جدو جہد جاری رکھیں گے ۔

اس موقع پر علامہ زاہد عباس کاظمی ، مولانا مجاہد نقوی  اور دیگر عزاداروں نے زبردست انداز میں زنجیر زنی کرنے بارگاہ اہلبیت ؑ میں اپنا پرسہ پیش کیا۔ علامہ باقر نقوی نے قمہ زنی کی ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.