شہادت گاہ ہمشکل پیغمبر علی اکبر ابن امام حسین ؑ

ہم صورتِ محبوبِ خدا(ص) تھے علی اکبر ​ؑ

ولایت نیوز شیئر کریں
شہادت گاہ ہمشکل پیغمبر علی اکبر ابن امام حسین ؑ
کلام : میر انیس
ہم صورتِ محبوبِ خدا تھے علی اکبر ​
شوکت میں شہِ عقدہ کشا تھے علی اکبر​
شپیر کی پیری کے عصا تھے علی اکبر​
اور بانو کی آنکھوں کی ضیا تھے علی اکبر​
جلوہ رخِ پرنور پہ تھا نورِ نبی کا​
روشن تھا گھر اس ماہ سے زہرا و علی کا​
محبوبِ دلِ خلق ہے شپیر کا جانی​
سب ایک زباں تھے کہ یہ ہے یوسفِ ثانی​
جن لوگوں نے دیکھی تھی محمد کی جوانی​
کہتے تھے زہے خامۂ قدرت کی روانی​
ایسا تو حسیں غرب سے تا شرق نہیں ہے​
احمد میں اور اس میں سرِ مو فرق نہیں ہے​
کیا حُسن ہے دیکھو تو رخِ پاک کی توقیر​
نے ماہ میں یہ ضو ہے نہ یہ مہر میں تنویر​
نازاں نہ ہو کیونکر قلمِ صانعِ تقدیر​
کھینچی ہے محمد سے شہنشاہ کی تصویر​
جن و ملک و حور میں افسانہ ہے اس کا​
نورِ رخِ خورشید بھی پروانہ ہے اس کا​
اس طرح کا محبوب پسر جس کو خدا دے​
کیونکر وہ پدر بیٹے کو مرنے کی رضا دے​
کس طرح سے ماں دولتِ اولاد لٹا دے​
یہ آگ جو بھڑکے تو کلیجے کو جلا دے​
فرزندِ جواں کوئی بشر کھو نہیں سکتا​
یہ صبر بجز ابنِ علی ہو نہیں سکتا​
اٹھارہ برس رنج اٹھا کر جسے پالیں​
کس طرح سے داغ اس کی جوانی کا اٹھا لیں​
بس ہووے تو آپ اس کے عوض برچھیاں کھا لیں​
ناچار ہیں کس طرح کلیجے کو سنبھالیں​
واں رحم دلِ فوجِ جفا جو میں نہیں ہے​
یاں دل کا یہ عالم ہے کہ قابو میں نہیں ہے​
فرزند کا منہ دیکھ کے فرماتے ہیں سرور​
عباس نہیں مر گئے ہم مر گئے اکبر​
دشمن کو بھی یہ داغ دکھائے نہ مقدر​
پہونچا گئے بھائی کو لبِ گور برادر​
بابا کے عوض عترتِ حیدر کو سنبھالو​
ہم مرنے کو جاتے ہیں تم اب گھر کو سنبھالو​
کہتا ہے پسر آپ سے کیونکر نہ جدا ہوں​
حضرت پہ تصدق ہوں سب اور میں نہ فدا ہوں​
مشہور ہوں ہم صورتِ محبوبِ خدا ہوں​
رخصت مجھے دیجئے کہ شریکِ شہدا ہوں​
گھر جانے کو فرمائیے اس دم نہ پسر سے​
جب آپ نہ ہوں گھر میں تو کیا کام ہے گھر سے​
شہ نے کہا کس طرح کہوں مرنے کو جاؤ​
میں آنکھوں سے دیکھا کروں تم برچھیاں کھاؤ​
اے لال رضا مرنے کی مادر سے تو لاؤ​
زینب کو تو راضی کرو آنسو نہ بہاؤ​
پوچھا بھی ہے دونوں سے جو مرنے کو چلے ہو​
رخصت تمہیں دے کون کہ نازوں کے پلے ہو​
یہ سُن کے گئے خیمے میں روتے ہوئے اکبر​
ناموسِ رسولِ عربی ہو گئے مضطر​
رنگ اڑ گیا بیتاب ہوئی شاہ کی خواہر​
بانو نے کہا خیر تو ہے اے مرے دلبر​
کیا ظلم ہوا ایسا جو یوں روتے ہو بیٹا​
ان آنکھوں کے ماں صدقے ہو کیوں روتے ہو بیٹا​
اکبر نے کہا روؤں نہ کیونکر غضب آیا​
اب اٹھتا ہے سر پر سے مرے باپ کا سایا​
سر دینے کو جاتا ہے ید اللہ کا جایا​
کیں منتیں پر اذنِ وغا میں نے نہ پایا​
فرماتے ہیں میداں کی اجازت نہ ملے گی​
بے مرضیِ مادر تجھے رخصت نہ ملے گی​
ماں سمجھی کہ میری ہی طرف ہے یہ اشارا​
پردے میں طلب کرتا ہے رخصت مرا پیارا​
بھیجوں تو مجھے بے اجل اس داغ نے مارا​
روکوں تو جدائی نہیں حضرت کی گوارا​
کیونکر کوئی کوہِ غمِ جاں کاہ اٹھائے​
ان دونوں سے پہلے مجھے اللہ اٹھائے​
یہ ذکر تھا جو خیمے میں آئے شہِ عالم​
بس دوڑ کے قدموں پہ گری بانوئے پرغم​
شہ نے کہا باقی کوئی مونس ہے نہ ہمدم​
روکو نہ کہ اب جاتے ہیں مرنے کے لیے ہم​
ہم شکلِ نبی بعد مرے تھامے گا گھر کو​
میں چھوڑ چلا ہوں علی اکبر سے پسر کو​
ہے شادیِ اکبر کا نہایت تمہیں ارماں​
جاؤ جو وطن میں تو کرو بیاہ کا ساماں​
نوشاہ بنے گا جو مرے بعد یہ ذی شاں​
ہوئیں گے نہ ہم، روح مگر ہوئے گی قرباں​
جس وقت قدم مسندِ شاہی پہ دھریں گے​
اکبر بھی یقیں ہے کہ ہمیں یاد کریں گے​
اس لال کی جس وقت دلہن بیاہ کے لانا​
بانو یہ رہے یاد ہمیں بھول نہ جانا​
میری بھی طرف سے اُسے چھاتی سے لگانا​
پوتا ہو تو مرقد پہ ہمارے اُسے لانا​
جب آن کے وہ گھٹنیوں تربت پہ چلے گا​
ان چھوٹے سے تلوؤں سے حُسین آنکھیں ملے گا​
یہ سن کے جگر ہو گیا اکبر کا دو پارا​
مادر سے کیا جوڑ کے ہاتھوں کو اشارا​
رخصت مجھے بابا سے دلا دیجئے خدارا​
ان باتوں کے سننے کا مجھے اب نہیں یارا​
جس طرح ہو اس کام میں کد کیجئے اماں​
فرزند کی مشکل میں مدد کیجئے اماں​
ماں کانپ گئی بیبیاں رونے لگیں ساری​
اکبر کے بھی، زینب کے بھی آنسو ہوئے جاری​
بانو نے کہا شہ سے یہ لونڈی گئی واری​
اکبر نہیں جینے کے جدائی میں تمہاری​
رخصت انہیں کیوں دیتے نہیں سوچتے کیا ہو​
کچھ ان کی ہے تقصیر کہ لونڈی سے خفا ہو​
تم رہتے سلامت تو میں بیاہ ان کا رچاتی​
اور باندھ کے سہرا انہیں نوشاہ بناتی​
کس چاہ سے چھوٹی سی دلہن بیاہ کے لاتی​
واللہ اب اس ذکر سے شق ہوتی ہے چھاتی​
وہ کیجے جو مقصد ہے مرے راحتِ جاں کا​
جب آپ نہ ہوں کیسی خوشی، بیاہ کہاں کا​
اب تو یہ خوشی ہے کہ یہ کام آپ کے آئیں​
حضرت کی حفاظت کریں اور برچھیاں کھائیں​
صاحب کے پسینے پہ لہو اپنا گرائیں​
لو بخش چکی دودھ بھی سر دینے کو جائیں​
رو رو کے کئی بار مرے پاؤں پکڑے تھے​
یہ دیر سے مرنے پہ کمر باندھے کھڑے تھے​
یہ سنتے ہی قدموں پہ گرے اکبرِ ذی جاہ​
چھاتی سے لگا بیٹے کو فرمانے لگے شاہ​
بابا پہ ہے دشوار جدائی تری واللہ​
خیر اب یہی مرضی ہے تو میدان کی لو راہ​
عرصہ نہیں کچھ زیست سے گھبراتے ہیں ہم بھی​
تم آگے چلو پیچھے چلے آتے ہیں ہم بھی​
یہ کہہ کے جو فرزند سے روئے شہِ مظلوم​
خیمے میں جواں بیٹے کی رخصت کی ہوئی دھوم​
کہنے لگے ہم شکلِ نبی شہ کے قدم چوم​
رکھیے گا دمِ نزع نہ دیدار سے محروم​
ماں بولی ہمیں شکل دکھاؤ گے نہ اکبر​
صدقے گئی کیا گھر میں پھر آؤ گے نہ اکبر​
گھبرا کے کہا بیٹے کے دامن کو پکڑ کر​
پھر آنے کا وعدہ تو کرو اے مرے دلبر​
بانو سے یہ کہنے لگے رو کر علی اکبر​
مہلت جو اجل دے گی تو پھر آئیں گے مادر​
دانستہ عزیزوں کو بھلاتا نہیں کوئی​
واں جانا ہے جس جا سے پھر آتا نہیں کوئی​
شہ روتے رہے بانو بھی کرتی رہی زاری​
میدان میں پہونچی علی اکبر کی سواری​
مقتل کی زمیں حسن سے روشن ہوئی ساری​
اک نور جو چمکا متحیر ہوئے ناری​
ثابت ہوا سب کو رخِ روشن کی چمک سے​
خورشید زمیں پر اتر آیا ہے فلک سے​
میداں میں یہ غل تھا کہ صدا شاہ کی آئی​
اب دلبرِ زہرا کا بھتیجا ہے نہ بھائی​
باقی تھا یہ بیٹا تو ہوئی اُس سے جدائی​
یارو مجھے دیتا نہیں آنکھوں سے دکھائی​
ہم شکلِ پیمبر ہے یہ دلبند ہے میرا​
اٹھارہ برس کا یہی فرزند ہے میرا​
اے ظالمو! یہ ہے مری پیری کا سہارا​
مر جاؤں گا میں جیتے جی گر اس کو بھی مارا​
بانو کا بھی پیارا ہے یہ میرا بھی ہے پیارا​
تصویر ہے اُس کی جو پیمبر ہے تمہارا​
قدموں پہ گرو اس کے اگر پاسِ ادب ہے​
احمد کی نشانی کا مٹانا تو غضب ہے​
ہو صاحبِ اولاد تو نیزے نہ سنبھالو​
زخمی مرا دل ہوتا ہے تیغیں نہ نکالو​
بیٹوں کی قسم ہے تمہیں اے برچھیوں والو​
اس داغ سے بابا کے کلیجے کو بچا لو​
بیکس ہے تمہیں اور تو کیا دیوے گا شپیر​
بچ جائے گا اکبر تو دعا دیوے گا شپیر​
یہ ذکر تھا رن میں جو قیامت ہوئی برپا​
ہر سمت سے اکبر پہ کیا فوج نے نرغا​
تلواریں چمکنے لگیں مینہ تیروں کا برسا​
اکبر نے بھی لے نامِ علی تیغ کو کھینچا​
غل تھا کہ کبھی ایسی لڑائی نہیں دیکھی​
یہ تیغ کی برش یہ صفائی نہیں دیکھی​
لاکھوں میں عجب شان سے لڑتا تھا وہ صفدر​
دو چار ہی حملوں میں صفیں ہو گئیں بے سر​
گھوڑوں سے اتر لاشوں میں چھپتے تھے ستمگر​
اک برق گری جس پہ پڑی ضربتِ اکبر​
بیٹے کی صدا جس گھڑی سن پاتے تھے شپیر​
سجدے کے لیے خاک پہ جھک جاتے تھے شپیر​
تا دیر تو سنتے رہے تلواروں کی جھنکار​
تکتے تھے پر اکبر نہ نظر آتا تھا زنہار​
لشکر میں ستمگاروں کے یہ غل ہوا اک بار​
برچھی علی اکبر کے کلیجے سے ہوئی پار​
لو سیدِ مظلوم کے دلدار کو مارا​
مارا اسے کیا احمدِ مختار کو مارا​
یہ سنتے ہی گھبرا کے گرے خاک پہ شپیر​
واں چھاتی پہ برچھی لگی یاں دل پہ لگا تیر​
اٹھے جو سنبھل کر تو یہ کرنے لگے تقریر​
تقدیر میں تھا داغِ پسر، واہ ری تقدیر​
یاں لٹ گئے آباد ہم آئے تھے وطن سے​
بیٹے کو اسی واسطے لائے تھے وطن سے​
تنہا ہوئے آخر نہ رہا کوئی ہمارا​
فریاد کہ اکبر کو ستمگاروں نے مارا​
پیری میں کیا جسم کی قوت نے کنارا​
تھا جس کا سہارا وہی دنیا سے سدھارا​
مشکل میں مدد باپ کی کرتا علی اکبر​
ہم جیتے کوئی دن جو نہ مرتا علی اکبر​
یہ کہتے ہوئے آئے عجب حال سے رن میں​
لغزش جو قدم میں تھی تو رعشہ تھا بدن میں​
آنکھوں میں بھرے اشک، زباں خشک دہن میں​
جوں شیر ترائی میں کبھی اور کبھی بن میں​
پایا نہ کسی جا پہ جو اُس رشکِ قمر کو​
گھبرائے ہوئے ڈھونڈھتے پھرتے تھے پسر کو​
اتنے میں یہ پُردرد صدا دور سے آئی​
اے قبلۂ کونین بڑی دیر لگائی​
بیٹے نے انی برچھی کی چھاتی پہ ہے کھائی​
مل لیجئے آ کر کہ ہے درپیش جدائی​
غش طاری ہے آنکھوں کو بھی کھولا نہیں جاتا​
یہ درد ہے سینے میں کہ بولا نہیں جاتا​
آوازِ پسر سنتے ہی دوڑے شہِ ذی شاں​
دیکھا کہ ہے فرزندِ جواں خون میں غلطاں​
لاشے سے لپٹ کر کہا بابا ترے قرباں​
کیا حال ہے کھایا ہے کہاں زخم مری جاں​
رخ زرد ہے سر تا بہ قدم خوں میں بھرے ہو​
مجھ سے تو کہو چھاتی پہ کیوں ہاتھ دھرے ہو​
یہ سنتے ہی دم میں علی اکبر کے دم آیا​
بابا کی طرف پیار سے ہاتھوں کو بڑھایا​
مجروحِ سناں سینے کو بیٹے کے جو پایا​
سر پیٹ کے چلّایا کہ فریاد خدایا​
دل بندِ محمد کے جگر بند کو مارا​
اٹھارہ برس کے مرے فرزند کو مارا​
اکبر نے کہا صبر کرو اے شہِ عالم​
ہم آپ کی آغوش میں مہماں ہیں کوئی دم​
بندے کو تو کچھ مرگِ جوانی کا نہیں غم​
افسوس کہ حضرت رہے بے مونس و ہمدم​
دشمن ہے ہر اک دشمنِ دیں آپ کی جاں کا​
تنہائی ہے اور سامنا دو لاکھ جواں کا​
یہ کہتے ہی تیور علی اکبر نے پھرائے​
ہمراہ دمِ سرد کے آنسو نکل آئے​
سر پیٹ کے شپیر سخن لب پہ یہ لائے​
آغوش سے بابا کی چلے بانو کے جائے​
کیا بولتے دنیا سے سفر کر گئے اکبر​
سوکھی ہوئی دکھلا کے زباں مر گئے اکبر​
اس درد سے روتے تھے پسر کو شہِ والا​
افلاک کو جنبش تھی زمیں تھی تہ و بالا​
لکھا ہے کہ جب مر گیا وہ گیسوؤں والا​
تقدیر نے اک بی بی کو خیمے سے نکالا​
تھا نور سے چہرے کے گماں بنتِ نبی کا​
رفتار میں انداز تھا رفتارِ علی کا​
تھے بال تو بکھرے ہوئے اور جسم میں رعشا​
اشک آنکھوں میں اور صدموں سے فق چاند سا چہرہ​
چلاتی تھی پکڑے ہوئے ہاتھوں سے کلیجا​
مارا گیا اٹھارہ برس کا مرا بیٹا​
شادی بھی ہوئی تھی نہ مرے ماہ لقا کی​
میں لٹ گئی اس بن میں دہائی ہے خدا کی​
ہے ہے مرے پیارے مرے جانی علی اکبر​
ہے ہے مرے نانا کی نشانی علی اکبر​
ہے ہے نہ میسر ہوا پانی علی اکبر​
برباد ہوئی تیری جوانی علی اکبر​
بن بیاہے تم اس دارِ فنا سے گئے واری​
پانی نہ ملا خلق سے پیاسے گئے واری​
زینب کی صدا سن کے اٹھے سیدِ ابرار​
خیمے میں اسے لے گئے با دیدۂ خونبار​
یہ جائے خموشی ہے انیسِ جگر افگار​
حق سے یہ دعا مانگ کہ اے ایزدِ غفار​
بر لا مری امید کو سرور کا تصدق​
اکبر کا تصدق، علی اصغر کا تصدق​

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3721

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3721