پاکستان وافغانستان میں دہشتگردی کا گھناؤنا کھیل امریکی، بھارتی اور اسرائیلی ٹرائیکا کا مذموم ایجنڈا ہے ۔ حامد موسوی

ولایت نیوز شیئر کریں

پاکستان آغا ز ہی سے مسائل کا شکار اور آزمائشوں سے دوچارہے ،قومی قیادت استعماری سرغنے ،یہود و ہنود کی سازشوں کو ناکام کرنے کیلئے عساکر پاکستا ن کی پشت پر ایستادہ ہو جائے
قائد اعظم محمد علی جناح اور اُنکے مخلص ساتھیوں کے بعد پاکستان کو قد آور قیادت میسر نہیں آئی، حکمران اور سیاستدان پاکستان کی بجائے اپنے دفاع پر طاقت صرف کر رہے ہیں
دہشتگردی کے خاتمے کیلئے پاکستا ن نے مختلف آپریشن کیے، نیشنل ایکشن پلان تیار کیا گیاآپریشن ردالفساد شدو مد کیساتھ جاری ہے مگر عالمی ابلیس میں نہ مانوں کی پالیسی پر عمل پیرا ہے
استعماری سرغنے کا نیا اتحادی بھارت افغانستان میں دہشتگردی کے ذریعے پاکستان کیخلاف سازشوں میں مصروف ہے جسے جواز بنا کرپاکستان کو نشانہ بنانا چاہتا ہے
حضرت فاطمہ زہرا ؑ کی تاسی میں خواتین کیلئے آواز بلند کر کے طبقہ نسواں کو عزت و عظمت سے ہمکنار کیا جا سکتا ہے۔ قائد ملت جعفریہ کا مجلس خاتون جنت سے خطاب

اسلام آباد ( ) سرپرست اعلیٰ سپریم شیعہ علماء بورڈ قائد تحریک نفاذ فقہ جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے پاکستان اور افغانستان میں دہشتگردی کا گھناؤنا کھیل امریکی، بھارتی اور اسرائیلی ٹرائیکا کا مذموم ایجنڈا ہے جسے ناکام کرنے کیلئے قومی قیادت عساکر پاکستا ن کی پشت پر ایستادہ ہوجائے،پاکستان آغا ز ہی سے مسائل سے دوچار اور آزمائشوں کا شکار ہے، بد قسمتی سے قائد اعظم محمد علی جناح ، لیاقت علی خان اور اُنکے دیرینہ مخلص ساتھیوں کی کی رحلت کے بعد پاکستان کو قد آور قیادت میسر نہیں آئی ، اسوقت حکمران اور سیاستدان پاکستان کی بجائے اپنے دفاع پر طاقت صرف کر رہے ہیں جنہوں نے عصبیتوں کو فروغ دے کر قائد اعظم اور اقبال کے ارشادات کو فراموش کر دیا ہے ،دہشتگردی کے خاتمے کیلئے پاکستا ن نے مختلف آپریشن کیے، نیشنل ایکشن پلان تیار کیا گیا اسوقت بھی آپریشن ردالفساد شدو مد کیساتھ جاری ہے مگر عالمی ابلیس میں نہ مانوں پر پالیسی کی عمل پیرا ہے جسکا نیا اتحادی بھارت اُسی کے ایماء پر افغانستان میں ہونے والی دہشتگردی کے ذریعے پاکستان کیخلاف سازشوں میں مصروف ہے ، افغانستان میں دہشتگردی کو جواز بنا کر پاکستان کو نشانہ بنانا اور اُسے کمزور کرنا ہے تاکہ سی پیک اور ایٹمی توانائی جیسے منصوبوں کو سبوتاژ کیا جا سکے ،خاتون جنت حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا نے حقو ق نسواں کیلئے سب سے پہلے آواز بلند کی جنکی تاسی کر کے طبقہ نسواں عزت و عظمت سے ہمکنار ہو سکتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار اُنہوں نے سوموار کو ہفتہ عظمت محمد آل محمد کی مناسبت سے مجلس خاتون جنت سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ آقای موسوی نے باور کرایا کہ بھارت نے تقسیم ہند کو دل سے تسلیم نہیں کیا اور گھناؤنی سازشوں میں مصروف ہو گیا حتیٰ کہ پاکستان کے اثاثے اور اُسکے حصے کا ساز و سامان بھی ہڑپ کر گیا۔اُنہون نے کہا کہ ہند و بنیے نے سب سے پہلے نومبر 1947ء میں جونا گڑھ پر قبضہ اور حیدر آباد دکن اور کشمیر پر تسلط جما لیالیکن پاکستان نے کچھ حصہ آزاد کرایا جو آج آزاد کشمیر کہلاتا ہے ۔آقای موسوی نے واضح کیا کہ مظلوم کشمیری گذشتہ پون صدی بے بہا قربانیاں دینے کے باوجود اپنی امنگوں کیمطابق مسئلہ کشمیر حل نہیں کرا سکے ۔ اُنہوں نے کہا کہ بھارت نے پاکستان پر 65ء کی جنگ مسلط کرکے ناکامی اٹھانے پر را کو وجود دیا اور پاکستان کو دولخت کر کے 71ء میں بنگلہ دیش بناکر دو قومی نظریہ کو دفن کرنے کی ہرزہ سرائی کی ، پھر وہ وقت آیا جب 79ء میں سوویت یونین نے افغانستان پر قبضہ جمایا اور پاکستا ن پر مسلط ڈکٹیٹر نے استعماری سرغنے کو پاک سرزمین استعمال کرنے کی اجازت دی ۔ اُنہوں نے کہا کہ روس کو افغانستان میں پسپائی ہوئی جو استعماری سرغنے کے اشارے پر پاکستان کے آمر مطلق کا کیا کرایا تھا جسکے نتیجے میں پاکستان میں غیر قانونی اسلحے ، ہیروئن اور دہشتگردی کی بنیاد پڑی،نائن الیون کے ڈرامے میں پاکستان کو فرنٹ لائن پر لا کر افغانستان کو نشانہ بنایا گیا جس میں پاکستان نے ایک مرتبہ پھر اتحادی ہونے کا کردار ادا کیا۔ قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے اس امر پر افسوس کا اظہار کیا کہ17سالوں میں امکانات سے بڑھ کر عالمی شیطان کا ساتھ دینے کی وجہ سے پاکستان دہشتگردی کی لپیٹ میں آیا ، پون لاکھ سے زائد جانوں کے نذرانے پیش کیے اربوں کھربوں کے نقصانات اور ہمارے شہرو ں کے شہر اجاڑ دیئے گئے۔ اُنہوں نے کہا کہ بھار ت اپنے ملک میں دہشتگردی کر وا کر اُسکاملبہ پاکستان پر ڈال دیتا ہے تاکہ ہمیں بدنام کر کے عالمی دباؤ ڈال سکے ،ایل او سی پر بھارتی اشتعال انگیزی اور جارحیت معمول بن چکا ہے جسکا منہ توڑ جواب دینے کیلئے عساکر پاکستا ن کی کوششیں اور قربانیاں لائق تحسین ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3729

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3729