یوم عاشورہ: پاکستان بھر میں کروڑوں عزاداروں کا مجلس ماتم زنجیر وقمہ زنی کا پرسہ

ولایت نیوز شیئر کریں

ذوالجناح ،علم اور تعزیوں کے مرکزی جلوسوں میں لا تعداد سوگواران حسینؑ کی شرکت ، نواسہ رسولؐ کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے زبردست زنجیر و قمہ کا ماتم
امام حسینؑ نے عظیم قربانی دیکر حرمت کعبہ عظمت انسانیت اور صداقت دین و شریعت کو چار چاند لگا دیئے جس پر ہر باغیرت و باضمیر انسان سید الشہداء کا ممنو ن ہے
پاکستان میں کوئی شیعہ سنی لڑائی نہیں فرقہ واریت فقط دشمن کی خواہش کا نام ہے جسے کبھی پورا نہیں ہونے دینگے۔قائد ملت جعفریہ آغا سیدحامد موسوی کی میڈیا سے گفتگو
مرکزی جلوس عاشورہ کی قراردادیں۔ یوم عاشورہ پر باہمی اتحا د کا مظاہرہ لائق تحسین ہے۔ فوارہ چوک عزاداران حسین ؑ سے علامہ قمر زیدی کا خطاب

راولپنڈی( ولایت نیوز) نواسہ رسول ؐ ،دلبندِ علی ؑ و بتول ؑ حضرت امام حسین علیہ السلام اور اُنکے 72جانثاروں کی یاد میں یوم عاشور ہ دنیا بھر کی طرح پورے ملک بشمول آزاد کشمیر و گلگت بلتستان میں روایتی مذہبی جذبے اور عقیدت و احترام کیساتھ منایا گیا۔راولپنڈی کا مرکزی جلوس عاشورہ امامبارگاہ عاشق حسین تیلی محلہ سے برامد ہوا، جسکی قیادت قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کی جسمیں شبیہ ذوالجناح ، علم عباس، تعزیہ ، تابوت اور گہوارہ شہزادہ علی اصغر سمیت دیگر تبرکات شامل تھے۔ اس موقع پر قائد ملت جعفریہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے میڈیا اور عزادران سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یزیددین اسلام اور شریعت محمد ی ؐؐکو تبدیل کرنا چاہتا تھاوحی و الہام کا اعلانیہ مذاق اڑاتا تھا،شرابی اور فاسق وفاجر تھا اُس نے تخت حکومت پر متمکن ہو کر نواسہ رسولؐ سے بیعت طلب کی تو امام عالی مقام نے انکاربیعت کرتے ہوئے واضح کیا کہ ہم معدن رسالتؐ ہیں ہمارے گھر ملائکہ نازل ہوتے ہیں ،دین اسلام کا آغاز ہمارے گھرانے سے ہوا اور اس کی تکمیل بھی ہمارے گھرانے میں ہوئی لہٰذانبی کی گود کا پالا محافظ دین و شریعت حسین ؑ یزید جیسے لہو و لعب کے رسیا کی بیعت نہیں کرسکتا۔

اُنہوں نے کہا کہ نواسہ رسول حسین ؑ ابن علی ؑ نے حج کیلئے بندھے احرام توڑ کر اُسے عمرے میں تبدیل کر کے حرمت کعبہ کو نقصان پہنچانے کے ناپاک یزید ی اراداے کو ناکام کر دیا ۔ آقای موسوی نے کہا کہ امام حسینؑ نے عظیم قربانی دیکر حرمت کعبہ عظمت انسانیت اور صداقت دین و شریعت کو بچا کر چار چاند لگا دیئے جس پر ہر باغیرت و باضمیر انسان اور محب رسول ؐ مسلمان سید الشہداء امام حسین ؑ کا ممنو ن ہے اسی لئے آج شرق و غرب میں بلا تفریق رنگ نسل مذہب مسلک امام حسین ؑ کی یاد منائی جا رہی ہے ۔

ایک صحافی کے سوال کا جواب دیتے ہوئے آقای موسوی نے واشگاف الفاظ میں کہا کہ پاکستان میں کوئی شیعہ سنی لڑائی نہیں فرقہ واریت فقط دشمن کی خواہش کا نام ہے جسے کبھی پورا نہیں ہونے دینگے۔ اُنہوں نے کہا کہ محرم الحرام کے پروگراموں کیلئے حکومت کی جانب سے کیے گئے سیکیورٹی اقدامات لائق تحسین ہیں تاہم امن کمیٹیوں ، علما ء بورڑ سے کالعدم گروپوں کے افراد کو نکالا جائے۔ آ غا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ کوئٹہ تافتان بارڈر پر زائرین کے مسائل آمد و رفت کو تر جیحی بنیادوں پر حل کیا جائے۔ انہوں نے باور کروایا کہ ظلم کے خلاف ڈٹ جانا حسینی شعار اور دنیا کے تمام مظلومین اور عالم اسلام کے مسائل کا حل راہ حسینیت ؑ میں مضمر ہے۔اُنہوں نے کہا کہ کربلائے معلی بین الحرمین روضہ امام حسین ؑ و روضہ حضرت عباسِ علمدار پرکروڑوں عزاداروں کا جمِ غفیر مظلومِ کربلا کو پرسہ دے رہا ہے جو اس بات کا ثبوت ہے کہ مظلوم کا حق ہے عالم پر ہیں دونوں جہاں غمخواروں میں،دنیا کے ہر ملک ہر شہر شرق و غرب کربلا والوں کے غم میں سوگوار ہے اور تمام بنی نوعِ انساں بلا تفریق مذہب ومسلک مولاحسین ؑ کو اپنے اپنے انداز میں خراج عقیدت پیش کررہے ہیں ۔

بعد ازاں امامبارگاہ کرنل مقبول حسین ، امبارگاہ حفاظت علی شاہ سے بھی جلوس ذوالجناح اور علم و تعزیہ برآمد ہوئے ۔

مرکزی جلوس عاشورہ نے فوارہ چوک میں بڑے جلسے کی شکل اختیار کر لی جہاں علامہ سید قمر زیدی نے ہزاروں عزاداران سے خطاب کرتے ہوئے فلسفہ شہادت پر روشنی ڈالی اور مصائب عاشورہ بیان کیے ۔

اس موقع پر ترجمان ضلعی محرم کمیٹی ٹی این ایف جے سید ابو نسم بخاری نے قرارداد عاشورہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ دین اسلام کی سر بلندی ، شریعتِ مصطفوی ؐ کی بقا اور حرمتِ انسانی کے احیاء کیلئے نواسہ رسول ؐ دلبندِ علی ؑ و بتول ؑ امام عالی مقام سید الشہداء حضرت امام حسین علیہ السلام اورآپ کی اولاد ،اصحاب و انصار کی قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے آج پوری دنیا میں یوم عاشورا عقیدت و احترام سے منایا جا رہا ہے ، دنیا کے ہر ملک ہر شہر شرق و غرب کربلا والوں کے غم میں سوگوار ہے اور تمام بنی نوعِ انساں بلا تفریق مذہب ومسلک مولاحسین ؑ کو اپنے اپنے انداز میں خراج عقیدت پیش کررہے ہیں۔جڑواں شہروں اسلام آباد و راولپنڈی کا مرکزی اجتماع یومِ عاشور تحریک نفاذِ فقہ جعفریہ کے مطالبہ پر عزاداروں کے جملہ مسائل کے حل کیلئے وفاقی وزارت داخلہ میں محرم کنٹرول رومز کے قیام کو سراہتے ہوئے مطالبہ کرتا ہے کہ دیگر صوبے بھی عزاداروں کے مسائل کے حل کیلئے ٹی این ایف جے عزاداری سیل سے مربوط رہیں کیونکہ ایام عزائے حسینی کا سلسلہ 8ربیع الاول تک اسی آب و تاب کے ساتھ جاری رہے گا ۔

قرارداد میں مظلومینِ کشمیر کیساتھ بھر پور اظہار یکجہتی کرتے ہوئے قا بض بھارتی افواج کی جانب سے عزاداری کے جلوسوں کو روکنے کی مذمت کی گئی اور واضح کیا گیا کہ مقبوضہ وادی میں عزاداری امام حسین پر بھارتی پابندی کے سبب کشمیریوں کے دلوں میں شو ق شہادت و حریت مزید بھڑکے گا۔قرارداد میں پاکستان کی بہادر افواج کو آپریشن رد الفساد میں عظیم کامیابیاں حاصل کرنے پر خراج تحسین پیش کرتے ہوئے جنرل قمر جاوید باجوہ کے اس بیان کی تائید کی گئی کہ دہشتگردی کے خاتمے کیلئے پاکستان نے سب سے زیادہ قربانی دی ہے اب باقی دنیا’ڈو مور ‘کرتے ہوئے اپنا فرض پورا کرے ۔ قرارداد میں اس امر پر دکھ کا اظہار کیا گیا کہ کالعدم تنظیمیں آج بھی نئے و پرانے ناموں سے سرگرمیوں میں مصروف ہیں حتیٰ کہ انتخابات میں بھی حصہ لے رہے ہیں ،قائد ملت جعفریہ آقای موسوی نے ۸ محرم کو یہ واضح کیا تھا کہ ہم حسینی ہیں ہم داعش یا اسکے جھنڈوں سے گھبرانے والے نہیں ،اصل مسئلہ داعشی فکر ہے جس کے خاتمے کیلئے نیشنل ایکشن پلان پر بلا رو رعایت عمل کروانا ہو گا۔

قرارداد میں افواج پاکستان رینجرز اور پولیس کے جوانوں کو بھی خراج تحسین پیش کیا گیا جوجانیں ہتھیلیوں پر رکھ کر دہشت گردوں کو گرفتار کررہے ہیں ۔قراراداد میں استعماری ایجنڈے کے تحت شام ، بحرین ، مشرقی سعودی عرب ،عوامیہ ،قطیف میں اور یمن میں ہونے والے مظالم کی پر زور مذمت کی گئی اور مطالبہ کیا گیا کہ مسلم ممالک پہلے اپنے آپ کو تعلیماتِ اسلام کے مطابق انسانی حقوق کا ماڈل بنائیں اور عوام کو بنیادی آزادی مہیا کریں ۔قرارداد میں خانہ پری کیلئے پر امن شہریوں کو فورتھ شیڈول میں شامل کرنے کا اقدام اصل دہشت گردوں کو کلین چیٹ قرار دیا گیا اور بانیانِ مجالس اور عزداروں سے بانڈز بھروانے کے اقدامات کو بنیادی انسانی حقو ق کی پامالی مترادف قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا گیا کہ پرامن شہریوں کے نام شیڈول فور ے نکالے جائیں ۔

قرارداد میں باور کرایا گیا کہ عشرہ محرم الحرام کے دوران کرکٹ میچز شیڈول کرنے کے اقدام سے مسلمانوں کی دل آزاری ہوئی ہے ،کس قدر دکھ کی بات ہے کہ تمام شیعہ سنی روایات کے مطابق رسول کریم آج اپنے نواسے کے غم میں سر میں خاک ڈالے گریہ کنا ں ہیں جبکہ اسلام کے نام پر وجود میں آنے والے ملک کی ٹیم کرکٹ میچ میں مصروف ہے جس پر پوری قوم کرکٹ بورڈ کی مذمت کرتی ہے۔ قرارداد میں مطالبہ کیا گیا کہ تمام ریاستی اداروں اسلامی نظریاتی کونسل ،فیڈرل شریعت کورٹ ،رویت ہلال کمیٹی میں مکتب تشیع کو نظریاتی نمائندگی دی جائے ۔

یوم عاشورہ کے مرکزی جلوس کے ہزاروں شرکاء نے اپنے اس عقیدے و ایمان کا اظہار کرتے ہوئے کہ سنت سیدہ زینب عزاداری ظالمین کے خلاف کائنات کا سب سے موثر پرامن احتجاج ہے کو ہمیشہ جاری و ساری رکھیں گے اس عہد کا اظہار کیا کہ قائدملت جعفریہ آغا سید حامدعلی شاہ موسوی کی بصیرت افروز اور جرات مندانہ قیادت پر غیر متزلزل اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے پاکیزہ اہداف ولاء و عزا کے دفاع و ترویج ، وطن عزیز میں قیام امن کیلئے انکی ہر آواز پر لبیک کہا جائے گا عزاداروں نے قراردادوں کی منظور ی کا اظہاریا ثارۃ الحسین لبیک یا حسین کے پر جوش نعروں کی گونج میں کیا۔ اس موقع پر چوہدری مشتاق حسین نے بھی خطا ب کیا جبکہ وجیہ کاظمی نے سلام و نوحہ پیش کیا۔فوارہ چوک میں مجلس کے اختتام پر ہزاروں سوگورانِ حسین نے زنجیر زنی کر کے امام عالی مقام سے اپنی عقیدت کا اظہار کیا اس موقع پر سینکڑوں کمسن بچوں نے قمہ زنی بھی کی۔

بعد ازاں جلوس عاشورا راجہ بازار ،پرانا قلعہ پہنچا تو امام بارگاہ شہیدان کربلا ٹائر بازار اور شاہ چن چراغ سے برآمد ہونے والے ذوالجناح کے جلوس بھی شامل ہوگئے۔جلوس عاشورا جامع مسجد روڈ اور پل شاہ نذر دیوان سے گزر کر امام بارگاہ قدیم میں اختتام پذیرہوا۔مختار سٹوڈنٹس آرگنائزیشن ضلع راولپنڈی کی جانب سے فوارہ چوک میں جبکہ مختا ر آرگنائزیشن ضلع راولپنڈی کی جانب سے امام با رگاہ قدیمی حسینی محاذ کے قریب عزاداری کیمپ لگایا گیا تھا جہاں مختارایس او اور ایم اوکے کارکنان کے ساتھ مختار جنریشن کے بچوں نے سبیل حسینی پر ڈیوٹیاں سرانجام دیں جبکہ ابراہیم سکاؤٹس نے حبیب بینک چوک راجہ بازار اور جامع مسجد روڈ پر ماتمیوں کو طبی سہولت فراہم کرنے کیلئے میڈیکل کیمپ لگائے۔تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کی ریجنل اور ضلعی محرم کمیٹیوں کے عہدیداران ،مختارفورس کے رضا کارپولیس کی بھاری نفری کے ہمراہ تمام راستے جلوس کے ہمراہ تھے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3728

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3728