امن کمیٹیاں کالعدم گروپوں سے بھری ہیں علماء و ذاکرین پر پابندیاں عزاداری میں رخنہ اندازی ہے ، ٹی این ایف جے پنجاب

ولایت نیوز شیئر کریں

موسوی ضابطہ عزاداری قیام امن کی ضمانت ہے جس پر عملدرآمد کو یقینی بنایا جائے ۔تحریک نفاذ فقہ جعفریہ پنجاب
محرم الحرام بے مثال معرکہ حق و باطل کی یادگار ہے جس نے ہر دور میں جبرواستبداد کے سامنے سینہ سپر ہونے کا عملی درس دیا
کالعدم گروپ نئے ناموں سے متحرک ہیں جنہیں انتظامیہ نے اپنی مجبوری بنا رکھا ہے جو وطن کی بقا کیلئے شدیدخطرہ ہے
تمام قومی ادارے عساکر پاکستان کی پشت پر ایک صفحے پر آ جائیں،تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے صوبائی ترجمان حسن کاظمی کا پریس کانفرنس سے خطاب

لاہور(ولایت نیوز )تحریک نفاذ فقہ جعفریہ پنجاب کے صوبائی ترجمان سید حسن کاظمی نے حکومت پر زوردیا ہے کہ وہ قائد ملت جعفریہ آغاسیدحامدعلی شاہ موسوی کے اعلان کردہ محرم ضابطہ عزاداری پر عملدرآمد کرکے عزاداروں کیلئے سہولتوں کی فراہمی کو یقینی بنائے جو ملک میں قیام امن اور اتحاد و اخوت کا چارٹر ہے۔

لاہور پریس کلب میں ریجنل اورضلعی کنوینر محرم کمیٹی ٹی این ایف جے سید ذوالفقار حیدر نقوی اور علامہ اسد عباس اطہر کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ محرم الحرام اس عظیم اور بے مثال معرکہ حق و باطل کی یادگار ہے جس نے مسلمانوں کو ہر دور میں جبرواستبداد کے سامنے سینہ سپر ہونے اور اسلام کو زندہ وجاوداں رکھنے کیلئے اپنی ہستی کو فنا کردینے کا درس دیا۔سید حسن کاظمی نے واضح کیا کہ اما م ؑ عالی مقام حسین ؑ ابن علی ؑ دین کی بنیادی اقدار اورانسانی زندگی کے ربانی طریق جدوجہد کی عظمت و سچائی کا اظہا ر فرمانے کیلئے میدان کربلا میں جلوہ افروز ہوئے اور اپنا ،اپنی اولاد و اصحاب کا خون دیکر اس طریق جدوجہد کو جاوداں فرما گئے جس پر چل کر کشمیر و فلسطین سمیت دنیا بھر میں آزادی و حریت کی لہو رنگ تحریکیں جاری وساری ہیں۔

صوبائی ترجمان نے کہا کہ سابق صدر جنرل پرویز مشرف نے ٹی این ایف جے کے مطالبہ پر پہلے 16 انتہا پسند تنظیموں کو کالعدم قراردیا جن کی تعداد اب 71سے زائد ہو چکی ہے لیکن رویت ہلال کمیٹی ،امن کمیٹیوں نظریاتی کونسل، علما بورڈسے لے کر ضلعی انتظامیہ کے اجلاسوں تک وہی کالعدم گروپ مختلف رو پ اور نئے نئے ناموں سے متحرک دکھائی دیتے ہیں جنہیں انتظامیہ نے اپنی مجبوری بنا رکھا ہے جس سے وطن عزیز کی بقاء کو شدید نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے ۔

انہوں نے کہا کہ محرم الحرام کیلئے کی گئی میٹنگ میں صوبائی حکومت کی جانب سے علماء و ذاکرین پر بے جا پابندیاں نہ لگانے کی یقین دہانی کروائی گئی تھی تاہم اسکے برعکس انتظامیہ کی جانب سے تاحال پر امن علماء و ذاکرین پر مختلف اضلاع میں پابندیا ں لگانے کا سلسلہ جاری ہے جو عزاداری میں رخنہ اندازی اور بنیادی حقوق کی صلبی ہے جبکہ یہ ااقدام حکومت کی ساکھ کو بری طرح متاثر کر رہا ہے۔ یقین دہانی اس عہد کا اظہار کیا کہ اسلا م کے نام پر قائم ہونیوالے وطن عزیز پاکستان میں پیام حسینیت ؑ کو مجالس عزا اور ماتمی جلوسوں کے ذریعے اجاگر کرنے کیلئے قائد ملت جعفریہ آ غاسیدحامدعلی شاہ موسوی کے ضابطہ عزاداری کی مکمل پاسداری کی جائیگی۔

تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے صوبائی ترجمان نے قائد ملت جعفریہ آقائے موسوی کے 14نکاتی ضابطہ عزاداری کی تفصیلات بیان کرتے ہوئے کہا کہ عساکر پاکستان اندرونی و بیرونی دشمنوں سے نبرد آزما ہیں ،آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ نے اعلان کیا ہے کہ اب ’’ڈو مور ‘‘دنیا کی باری ہے لہذا تمام قومی ادارے عساکر پاکستان کی پشت پر ایستادہ ہوکر ایک صفحے پر آ جائیں،سرکاری طور پر کالعدم قراردی جانیوالی تنظیموں کو حکومت آہنی شکنجے میں جکڑے، نئے ناموں سے سرعام کام کرنے اور انکی بیرونی فنڈنگ پر پابندی لگا ئی جائے،مسلمہ مکاتب میں سے کسی کو بھی غیر مسلم کہنا قابل تعزیر جرم قراردیا جائے،شرکائے مجالس و جلوسہائے عزا ء کیلئے حکومت آسانیاں پیدا کرے ، عزاداروں کو خوف و ہراس میں مبتلا نہ کیا جائے، قرب و جوار کی عمارتوں اور خالی مقامات کی خصوصی دیکھ بھال کی جائی،عزاداری کے پروگراموں کی ویڈیو فلم بنائی جائے،مجالس اور ماتمی جلوسوں کے داخلی و خارجی راستوں پر سی سی ٹی وی کیمرے اور واک تھرو گیٹ نصب کیے جائیں او ر انکی حفاظت کیلئے پولیس موبائل اسکواڈ اور ایلیٹ فورس کا گشت یقینی بنایا جائے،سیکیورٹی امور میں پولیس اور رینجرز کیساتھ ابراہیم اسکاؤٹس اور رضا کار مختارفورس کا تعاون حاصل کیا جائے،امامبارگاہوں،عزاخانوں کے متولیان ،بانیان مجالس اور ماتمی جلوسوں کے منتظمین خود بھی حفاظتی انتظامات کریں،علماء و ذاکرین اپنے خطابات میں قومی سلامتی اور اخوت و یگانگت کو ترجیح دیں ،اشتعال انگیزی سے اجتناب کریں اور شہدائے کربلا کی قربانیوں کا مثبت انداز میں پر چار کریں،عشرہ محرم کے دوران الیکٹرانک میڈیا پر موسیقی ،ڈرامے ، طربیہ پروگرام بند رکھے جائیں اور شہدائے کربلا کی قربانیوں کو اُجاگر کیا جائے،مجالس اور عزاداری کے جلوسوں کو بھرپور کوریج دی جائے ،اخبارات معرکہ کربلا کے ہیروز کی سیرت اور کارہائے گراں قدر کے عنوانات پر خصوصی ایڈیشن شائع کریں تاکہ جذبہ ایثار و قربانی کو زندہ رکھا جاسکے،سیاسی جماعتیں عشرہ محرم کے دوران سیاسی سرگرمیاں معطل رکھیں،خواتین مخدراتِ عصمت و طہارت اور حضرات شہدائے کربلا ،اہلبیت اطہار ؑ اور پاکیزہ صحابہ کبارؓ کی سیرت پر عمل کریں،مجالس عزا ء کے انعقاد میں اوقات کی پابندی اور نظم و نسق کو یقینی بنایا جائے،تمام مسالک بشمول اقلیتوں کی عز ت و احترام کا خیال رکھا جائے،مجالس اور ماتمی جلوسوں کے دوران بجلی اور گیس کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے اورصفائی وروشنی کاخاص خیال رکھاجائے،علماء و ذاکرین پر پابندی اور زبان بندی کے بجائے انہیں ضابطہ عزاداری کا پابند بنایا جائے اور پُرامن افراد کے نام شیڈول فور سے خارج کیے جائیں،عشرہ محرم کے دوان امتحانات کا شیڈول نہ دیا جائے،حکومت سرکاری طور پر قائم کیے جانیوالے محرم کنٹرول رومز کو حسب سابق 8ربیع الاول تک تحریک نفاذِ فقہ جعفریہ کے مرکزی کنٹرول روم کیساتھ مربوط رہنے کی ہدایت کرے کیونکہ محرم صرف دس دنوں تک نہیں بلکہ عزاداری کے پروگرام 2ماہ 8دن تک جاری رہتے ہیں۔تحریک نفاذ فقہ جعفریہ قوم و ملک کے وسیع تر مفاد میں عملی تعاون کیلئے ہمہ وقت تیار ہے۔ انہوں نے ا س عہد کا اعادہ کیا کہ امام ؐ عالی مقام نے جس عظیم مقصد کیلئے انمول قربانی پیش کی اسکی تکمیل کیلئے کسی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3721

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3721