پاکستان شام و لیبیا نہیں , انکل سام ویت نام والا ا نجام بھول جائے گا،آغا حامد موسوی 

ولایت نیوز شیئر کریں

بدمست ری پبلکن ہاتھی ٹرمپ کا حال ابرہہ سے بدتر ہو گا،قائد ملت جعفریہ آغا حامد موسوی 

پاکستان امریکی دھمکی کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھائے، امریکی و نیٹو فوجی زمینی سپلائی اور فضائی راہداری بند کردے،امریکہ کو چھٹی کا دودھ یاد آجائے گا 

پاکستان شام و لیبیا نہیں پاک فوج اور عوام امریکہ کی پھیلائی دہشت گردی صوبائیت لسانیت کچل چکے ہیں،تمام مسالک صوبے دشمن کے مقابل ایک ہیں

امریکی پٹھو بھارت افغان دہشت گردوں کا سب سے بڑا پالن ہار ہے، جنگجو امریکی ضرورت ہیں جنہیں عالمی شیطان کبھی ختم نہیں ہونے دے گا

آزمائش میں دوست کا پتہ چلتا ہے امریکہ ہر آزمائش میں ناکام جبکہ پاک چین دوستی ایک با ر پھر انمول ثابت ہوئی ہے،مختار سٹو ڈنٹس نگران کونسل سے خطاب 

اسلام آباد ( ولایت نیوز)سپریم شیعہ علماء بورڈ کے سرپرست اعلی و تحریک نفاذ فقہ جعفریہ کے سربراہ آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ پاکستان کے خلاف کسی مہم جوئی کی صورت وحدت و اخوت کی لڑی میں پروئے غیور پاکستانی انکل سام کو ایسا مزہ چکھائیں گے کہ وہ کمبوڈیاویت نام والا انجام بھول جائے گا ری پبلکن پارٹی کے بدمست ہاتھی ٹرمپ کا حال ابرہہ سے بھی بدتر ہو گا ، امریکہ نے پاکستان کو تر نوالہ سمجھ لیا ہے شاید وہ بھول گیا کہ پاکستان شام اور لیبیا نہیں پاک فوج اور عوام امریکہ کی پھیلائی دہشت گردی فرقہ واریت صوبائیت لسانیت کا سر کچل چکے ہیں تمام مسالک صوبے اور قومیتیں عالمی شیطان کے مقابل ایک ہیں، امریکی دھمکی یواین چارٹر کی خلا ف ورزی ہے پاکستان امریکی دھمکی کا معاملہ اقوام متحدہ میں اٹھائے ، کراچی سے افغانستان تک امریکی و نیٹو زمینی فوجی سپلائی اور امریکی فوجی طیاروں کی فضائی راہداری بھی بند کردے ، امریکی پٹھو بھارت افغان دہشت گردوں کا سب سے بڑا پالن ہار ہے، جنگجو امریکی ضرورت ہیں جنہیں امریکہ کبھی ختم نہیں ہونے دے گا،امریکہ کے پاکستان کے خلاف طبل جنگ بجانے اور افغانستان میں قدم جمائے رکھنے کا مقصد چین کے بڑھتے ہوئے اثر کو روکنا، وسطی ایشیائی ریاستوں اور افغانستان کے معدنی وسائل پر قبضہ اور سب سے بڑھ کر واحد مسلم ایٹمی ریاست پاکستان کے جوہری اثاثوں پر کنٹرول حاصل کرنا ہے ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے سید محمد عباس و سید باقر نقوی کی زیر سرکردگی مختار سٹو ڈنٹس آرگنائزیشن کی نگران کونسل کے اراکین سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ مولائے کائنات علی ابن ابی طالب ؑ کا فرمان ہے کہ جس سے نیکی کرو اس کے شر سے بچوامریکہ پاکستان کی قربانیوں سے واحد سپر پاور بنا اور آج اسی پر چڑھ دوڑا ہے، قیام پاکستان کے وقت کے 33ویں امریکی صدرٹرومین سے لے کر اوبامہ تک کسی امریکی صدر کو پاکستان کے خلاف ایسی جسارت کی جرات نہ ہوئی جس کا ارتکاب امریکہ کے 45ویں صدر ٹرمپ نے کیا ہے ،امریکہ اپنے آپ کوپوری دنیا کا حکمران سمجھتا ہے جو جب چاہے جہاں چاہے کسی کو نشانہ بنا سکتا ہے ، ٹرمپ امریکی صدارت کا حلف اٹھانے کے بعد اپنے تمام انتخابی وعدوں سے پھر گیا ہے اور افغانستان سے امریکی فوجیں واپس بلانے کے بجائے 3900مزید بلیک واٹر فوجی بھجوا رہا ہے ۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا ہے کہ لیاقت علی خان نے اپنی ہمسایہ سپر پاور کی دعوت ٹھکرا کر امریکہ کی دوستی کو ترجیح دی جس کا خمیازہ پاکستان نے اپنی قومی زندگی کے دوران مسلسل بھگتا ہر آزمائش میں امریکہ نے پاکستان کو پیٹھ دکھائی اور65کی جنگ سے سی پیک تک پاکستان کی ہر کامیابی پر اسکے پیٹ میں مروڑ اٹھتے رہے۔انہوں نے کہا کہ امریکہ اور نیٹو پورے افغانستان کو کھنڈر بنانے کے باوجود جنگجو دہشت گردوں کا خاتمہ نہیں کر سکے کیونکہ وہ ایسا کرنا ہی نہیں چاہتے بصورت دیگر اس کے افغانستان میں قیام کا جواز ہی ختم ہو جائے گا ،الٹا چور کوتوال کو ڈانٹے افغانستان میں موجود تمام دہشت گردوں کے تربیت خانے بھارتی قونصل خانے ہیں جو روسی انخلا ء کے بعد آج تک پاکستان پر مسلسل حملہ آور ہیں ان بھارتی سپانسرڈ دہشت گردوں کے سبب پاکستان سیکیورٹی فورسز کے جوانوں سمیت 80ہزار جانوں کے نذرانے ،اربوں کھربوں کے نقصانات برداشت کرچکا ہے لیکن عالمی شیطان میں نہ مانوں کی رٹ پر قائم ہے ۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ پاکستان کے قیام کے وقت سے ہی شیطانی قوتیں پاکستان کے پیچھے ہاتھ دہو کر پڑی ہوئی ہیں جن کا مقصد پاکستان کے دوقومی نظریے کو سبوتاژ کرنا تھا اسی لئے ازلی دشمن بھارت کی ویر اعظم نے پاکستان توڑنے کے بعد یہ نعرہ لگایا تھا کہ نظریہ پاکستان کو خلیج بنگال میں ڈبو دیا پاکستان پر بھارت نے جنگیں مسلط کیں،پاکستان کو ڈرانے کیلئے ایٹمی دھماکے کئے جن پر امریکہ سمیت تمام شیطانی قوتیں خاموش رہیں لیکن جب پاکستان نے جوابی ایٹمی دھماکے کئے تو وطن عزیز پر اقتصادی پابندیاں عائد کردی گئیں ۔

آغا سید حامد علی شاہ موسوی نے کہا کہ بڑھاپے میں اولاد ،غربت میں بیوی اور آزمائش میں دوست کا پتہ چلتا ہے امریکہ ہر آزمائش میں ناکام جبکہ پاک چین دوستی ایک با ر پھر انمول ثابت ہوئی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3727

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3727