داعش کی پسپائی پربدحواس امریکہ نے حشد الشعبی پر حملہ کردیا؛چالیس جوان شہید

ولایت نیوز شیئر کریں

بغداد (ولایت مانیٹرنگ ڈیسک ) عراقی فوج اور رضاکار فوج حشد الشعبی کی عظیم الشان کامیابیاں اور داعش کی مسلسل پسپائی  امریکہ سے ہضم نہ ہوسکیں ۔ امریکی جنگی طیاروں کے حملے میں  عراق و شام کے سرحدی علاقوں میں عراقی رضاکاروں پر مشتمل پاپولائزیشن یونٹ  الحشد الشعبی کے چالیس جوان شہید ہو گئے ہیں۔ حشد الشعبی کا

سید الشہداء بریگیڈ عراق اور شام کی سرحد پر اپنی زمہ داریاں نبھا رہی تھی کہ امریکی لڑاکا طیاروں نے بمباری کردی۔ امریکی حملے  بڑی تعداد میں بریگیڈ کا جانی نقصان ہوا ہے.۔

امریکا کی فوج نے حملہ ایسے موقع پر کیا جب عراقی فورسسز اور قبائل موصل سے 70 کلو فاصلے پر تل افر قصبہ کو داعش کے کنٹرول سے آزاد کرانی کی تیاریوں میں مصروف تھے. ترجمان نے اس کارروائی کو داعش کے خلاف حاصل ہونے والی کامیابیوں کے خلاف سازش قرار دیا ہے.

عراق کی رضاکار فورس الحشد الشعبی کے ترجمان  نے امریکی حملے پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے  کہا ہے قیمتی جانیں ضائع نہیں‌جائیں گی بدلہ لیا جائے گا۔

عراق کی الحشد الشعبی فورس نے اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہ امریکہ کی اس جارحیت کا اسے بھر پور جواب جلد مل جائے گا کہا: ہم حکومت عراق سے مطالبہ کرتے ہیں کہ سید الشہداء بٹالین پر کئے گئے امریکی حملے کے بارے میں تحقیقات کرائے۔

سید الشہدا بٹالین کے کمانڈر کا کہنا ہے کہ امریکی جنگی طیاروں نے پیر کے روز علی الصبح شامی سرحد پر تعیینات الحشد الشعبی کے ٹھکانوں پر وحشیانہ حملہ کرکے متعدد جوانوں کو شہید یا زخمی کردیا۔

امریکی حکام نے دعوی کیا ہے کہ جنگی طیاروں نے داعشی دہشت گردوں کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا ہے تاہم الحشد الشعبی سے وابستہ سید الشہدا بٹالین کے کمانڈر کا کہنا ہے امریکہ جان بوجھ کر الحشد الشعبی کو نشانہ بنا رہا ہے۔
امریکہ نے الحشد الشعبی کے ٹھکانوں پر سمارٹ بموں کا استعمال کیا ہے جس کے نتیجے میں کافی جانی اور مالی نقصان ہوا ہے۔

سید الشہدا بریگیڈ کے کمانڈر نے امریکی حکام کو خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ الحشد الشعبی کے جوان امریکی جارحیت کا بھر پور جواب دیں گے اور تمام داعشی دہشت گردوں کا خاتمہ کرکے دم لیں گے۔

یاد رہے کہ عوامی رضاکاروں پر مشتمل پاپولر موبلائزیشن یونٹ المعروف حشد الشعبی کا قیام آیۃ اللہ سیستانی کی کال پر 2014 میں مقامات مقدسہ کی حفاظت کیلئے عمل میں لایا گیا تھا جس میں شیعہ سنی کرد قبائل کے ساتھ ساتھ ایزدی قبیلے کے افراد بھی شامل ہیں ۔ جس نے موصل کو آزاد کرانے میں نمایان کردار ادا کیا۔ حال ہی میں عراقی وزیر اعظم حیدر العبادی نے بعض حلقوں کی جانب سے حشد الشعبی کو ختم کرنے کا مطالبہ مسترد کردیا تھا اور اعلان کیا تھا کہ داعش سے تل افر کی آزادی کیلئے حشد الشعبی کے دستے عراقی فورسز کے شانہ بشانہ آپریشن میں حصہ لیں گے ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے


Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3721

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (1) in D:\hshome\automotonk\walayat.net\wp-includes\functions.php on line 3721